pm narendra modi justifies ticket of sadhvi pragya singh thakur who say indian civilization terrorist ns– News18 Urdu

وزیراعظم مودی نےکہا- سادھوی پرگیہ کولوک سبھا کا ٹکٹ دینا صحیح، راہل- سونیا بھی توضمانت پرباہر

وزیراعظم نے جمعہ کو کہا کہ پرگیہ ٹھاکرکوبھوپال سے امیدواربنایا جانا ان لوگوں کےلئے 'علامتی' جواب ہے، جو ہندو تہذیب کو'دہشت گردی' کہتے ہیں۔

Apr 20, 2019 10:15 AM IST | Updated on: Apr 20, 2019 10:21 AM IST

دہشت گردی کےمعاملے میں ملزم رہ چکی سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکرکوبھوپال سے لوک سبھا الیکشن کا ٹکٹ دیئےجانے کولےکربی جے پی پرسوال اٹھ رہے ہیں۔ سادھوی کی امیدواری کولےکروزیراعظم نریندرمودی نے بڑا بیان دیا ہے۔ انہوں نے سادھوی پرگیہ کو الیکشن کا ٹکٹ دیئے جانےکو صحیح ٹھہرایا۔ انہوں نےکہا کہ راہل گاندھی اورسونیا گاندھی بھی توضمانت پرباہرہیں۔

وزیراعظم نے جمعہ کوانگریزی نیوزچینل 'ٹائمس ناو' کودیئےگئے ایک انٹرویو میں یہ باتیں کہیں۔ انہوں نے 1984 کے سکھ فسادات، سمجھوتہ بلاسٹ سےلےکرجسٹس لویا کی موت تک کے حادثات کا ذکرکرتے ہوئےکانگریس پرنشانہ سادھا۔ وزیراعظم مودی نےکہا 'پرگیہ ٹھاکرکوبھوپال سے بی جے پی امیدواربنایا جانا ان لوگوں کےلئے'علامتی' جواب ہے، جوہندو تہذیب کو'دہشت گرد' کہتے ہیں۔

وزیراعظم مودی نےکہا- سادھوی پرگیہ کولوک سبھا کا ٹکٹ دینا صحیح، راہل- سونیا بھی توضمانت پرباہر

وزیراعظم نریندرمودی: فائل فوٹو

وزیراعظم نریندر مودی نے کیا کہا؟

وزیراعظم مودی کا بیان اس دن آیاہے جب پرگیہ سنگھ ٹھاکرنے یہ کہہ کرتنازعہ پیدا کردیا تھا کہ 26/11 ممبئی حملےمیں آئی پی ایس آفیسرہیمنت کرکرے کی موت اس لئے ہوئی تھی، کیونکہ انہوں نے ہیمنت کرکرے کو شراپ (بد دعا) دی تھی۔ کانگریس اوردوسری اپوزیشن پارٹیوں نے پرگیہ ٹھاکرکےاس بیان کی مخالفت کی، جس کے بعد انہوں نےاپنےاس بیان کو یہ کہہ کرواپس لے لیا تھا کہ اپوزیشن کو اس کا فائدہ ہوگا۔

انہوں نے کہا کہ جن لوگوں کوعدالت نے قصوروارقراردیا ہے، لوگ ان کے پاس جاتے ہیں اورگلے لگاتے ہیں، ان سے جیل میں ملتے ہیں، جب ان کواسپتال میں شفٹ کیا جاتا ہے تب ان سے ملنے جاتے ہیں۔ کیا امیٹھی اوررائے بریلی کے جوامیدوارضمانت پرباہرہیں، ان سے سوال نہیں پوچھا جانا چاہئے۔ تاہم بھوپال کا بی جے پی امیدوارضمانت پرباہرہےاورالیکشن لڑ رہا ہے تو چاروں طرف ہنگامہ برپا ہوگیا ہے۔

وزیراعظم نےمزید کہا کہ جب سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکرکوجیل میں ٹارچرکیا جارہا تھا تب کسی نے آوازنہیں اٹھائی۔ انہوں نے یہ بھی الزام لگایا کہ کانگریس کسی فلمی اسکرپٹ کی طرح کہانیاں بناتی ہے۔ وہ ایک چیزکواٹھاتے ہیں، اس میں کچھ ملاتے ہیں، کہانی میں ایک ولین کوڈالتے ہیں اورجھوٹی تشہیرکرتے ہیں۔ جسٹس لویا کی عام موت ہوئی، لیکن انہوں نے اس کی بھی کہانی گڑھ لی۔