مکہ مسجد بم دھماکہ کیس کے اہم ملزم سوامی اسیمانند کو اس شرط پر ملی ضمانت– News18 Urdu

مکہ مسجد بم دھماکہ کیس کے اہم ملزم سوامی اسیمانند کو اس شرط پر ملی ضمانت

شہر حیدرآباد کی تاریخی مکہ مسجد میں18مئی 2007کو ہوئے بم دھماکہ کے معاملہ میں شہر حیدرآباد کی ایک عدالت نے مکہ مسجد بم دھماکہ معاملہ میں سوامی اسیما نند کی مشروط ضمانت منظور کی ہے

Mar 23, 2017 08:50 PM IST | Updated on: Mar 23, 2017 08:51 PM IST

حیدرآباد : شہر حیدرآباد کی تاریخی مکہ مسجد میں18مئی 2007کو ہوئے بم دھماکہ کے معاملہ میں شہر حیدرآباد کی ایک عدالت نے مکہ مسجد بم دھماکہ معاملہ میں سوامی اسیما نند کی مشروط ضمانت منظور کی ہے۔ چوتھے میٹرو پولیٹن سیشن کورٹ نے ان سے خواہش کی کہ وہ 50ہزار روپئے کی دو ضمانتیں پیش کریں اور عدالت کی اجازت کے بغیر حیدرآباد نہ چھوڑیں۔ ایک اور مشتبہ ملزم بھرت بھائی کو بھی اسیمانند کے ساتھ ضمانت حاصل ہوئی ۔ اسیمانند جن کا اصل نام ناباکمار سرکار ہے، بم دھماکہ کی سازش کے ملزم ہیں۔

نومبر 2010میں سی بی آئی نے اسیمانند کو گرفتار کیا تھا اور انہیں قومی جانچ ایجنسی این آئی اے کے حوالے کیا گیاتھا۔ ان کی گرفتاری سے پہلے اس معاملہ کی جانچ کرنے والوں نے تقریباً 100نوجوانوں سے پوچھ تاچھ کی تھی۔ اسیمانند کے وکیل رامچندر راو نے تصدیق کی ہے کہ اسیمانند اور بھرت کو مشروط ضمانت حاصل ہوئی ہے ۔ مئی 2011 میں چارج شیٹ داخل کرنے کے بعد اس معاملہ کی جانچ میں این آئی اے نے کوئی پیشرفت نہیں کی تھی ۔ اس چارج شیٹ میں این آئی اے نے اسیمانند کا نام شامل کیاتھا۔

مکہ مسجد بم دھماکہ کیس کے اہم ملزم سوامی اسیمانند کو اس شرط پر ملی ضمانت

ضمانت کے تمام امور کی تکمیل کے بعد اسیمانند کی رہائی عمل میں آئے گی۔ 18مئی 2007کو مکہ مسجد میں ہوئے بم دھماکہ میں 9افراد ہلاک اور دیگر کئی زخمی ہوگئے تھے۔آر ایس ایس کے سابق رکن اسیمانند نے قبل ازیں اس معاملہ میں دائیں بازو کے کارکنوں کے رول کا اعتراف کیا تھا تاہم بعد ازاں وہ اپنے بیان سے منحرف ہوگئے۔ اسیما نند اور دیگر 6کو اس ماہ کے اوائل میں اجمیر کی درگاہ شریف میں ہوئے بم دھماکہ کے معاملہ میں قومی جانچ ایجنسی (این آئی اے )کی عدالت نے بری قرار دیا تھا۔اسیمانند ، سمجھوتہ اکسپریس اور مالیگاوں بم دھماکوں کا بھی معاون ملزم ہے۔

Loading...

Loading...