یوگی کے وزیر نے کہا "پاکستان آرمی چیف سے گلے مل کرنوجوت سنگھ سدھو نے بھائی چارہ کی مثال پیش کی"۔– News18 Urdu

یوگی کے وزیر نے کہا "پاکستان آرمی چیف سے گلے مل کرنوجوت سنگھ سدھو نے بھائی چارہ کی مثال پیش کی"۔

یوگی کے وزیر نے کہا کہ رام مندرمعاملہ پرسادھوسنتوں کےغصے کوختم کرنے کے لئے کیشو پرساد موریہ اس طرح کا بیان دے رہے ہیں۔

Aug 22, 2018 09:06 PM IST | Updated on: Aug 22, 2018 09:06 PM IST

اترپردیش کی یوگی حکومت میں کابینہ وزیراوراتحادی پارٹی کے سربراہ اوم پرکاش راج بھر بدھ کو سنت کبیر نگر پہنچے۔ اس دوران انہوں نے رام مندر مسئلے کو لے کرنوجوت سنگھ سدھو کے پاکستان دورے پراپنی رائے دی۔

میڈیا سے بات کرتے ہوئے کابینہ وزیر اوم پرکاش راج بھر نے نائب وزیراعلیٰ کیشو پرساد موریہ کے رام مندرپردیئے بیان پر کہا کہ اجودھیا معاملہ ابھی عدالت میں زیرغور ہے۔ سادھو سنت ناراض ہیں اورجگہ جگہ سادھو سنت احتجاج کررہے ہیں۔ سادھوسنتوں کے غصے کو ختم کرنے کے لئے کیشو پرساد موریہ اس طرح کا بیان دے رہے ہیں۔

یوگی کے وزیر نے کہا

یوگی حکومت میں وزیر اوم پرکاش راج بھر۔ فائل فوٹو

Loading...

انہوں نے کہا کہ اس معاملے کے حل کا دو ہی راستہ ہے۔ ایک یا تو آپسی رضا مندی سے اس کا حل ہوگا یا عدالت کے فیصلے سے، تیسرا کوئی متبادل نہیں ہے۔ وہیں رام مندر بننے کے سوال پر اوم پرکاش راج بھر نے پوچھا کہ مندر بننے سے کیا سب کو تلیم، روزگار مل جائے گا؟ اوم پرکاش نے کہا کہ نہ ہم مندر کے حق میں ہیں، نہ مسجد کے حق میں ہیں ، مندر کے مدعے  پر صرف جھگڑا پالا جارہا ہے۔

وہیں کانگریس کے لیڈر نوجوت سنگھ سدھو کے پاکستان جانے پر اوم پرکاش راج بھر نے کہا کہ اس میں کوئی برائی نہیں ہے۔ سدھو بھی کرکٹررہے ہیں اور پاکستانی وزیراعظم عمران خان بھی کرکٹررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی فوج کے جنرل سے گلے مل کر نوجوت سنگھ سدھو نے بھائی چارگی کی مثال پیش کی، اس میں کوئی حرج نہیں ہے۔ اوم پرکاش راج بھرنے کہا کہ مودی جی جاکر چادر چڑھاتے ہیں تو کوئی بات نہیں ہوتی۔ نوجوت سنگھ سدھو چلے گئے تو ہنگامہ کیوں ہورہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جتنا ہنگامہ سدھو کے پاکستان جانے پر ہورہا ہے، اگر اتنی بحث ریاست میں تعلیم اور روزگار دینے کے لئے ہوتی تو بات سمجھ میں آتی، لیکن کچھ لیڈر ایسے ہیں، جو ہندوستان - پاکستان اور ہندو - مسلم ہی کیا کرتے ہیں۔

Loading...