قطر کا اعلان : سفارتی تعلقات توڑنے والے ممالک کے شہری بھی ہمارے یہاں رہ سکتے ہیں

Jun 11, 2017 10:43 AM IST | Updated on: Jun 11, 2017 10:43 AM IST

ریاض : قطر نے کہا ہے کہ حال ہی میں اس سے سفارتی تعلقات توڑنے والے ممالک کے شہری اس کے یہاں رہنے کے لئے آزاد ہیں، انہیں لے کر پالیسیوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی ہے۔  سرکاری خبر رساں ایجنسی كيو این اے نے وزارت داخلہ کے حوالے سے کل کہا کہ قطر سے مکمل یا جزوی طور پر سفارتی تعلقات ختم کرنے والے ممالک کے شہری اس کے یہاں آرام سے رہ سکتے ہیں۔ وزارت کے مطابق ’’سفارتی تعلقات توڑنے کے واقعات کے بعد ایسے ممالک کے شہریوں کے لئے ہم نے اپنی پالیسیوں میں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے۔ وہ موجودہ قانون کے تحت ہمارے یہاں رہ سکتے ہیں۔ انہیں ملک سے جانے کے لئے نہیں کہا جائے گا‘‘۔

ایجنسی کے مطابق قطر میں دہشت گردی سے متعلقہ لگنے والے تمام الزامات ​​بے بنیاد ہیں۔ دہشت گردی کے خلاف اس کی جنگ اس سے سفارتی تعلقات ختم کرنے والے ممالک کے مقابلے میں کہیں زیادہ تیز ہے۔  قابل ذکر ہے کہ سعودی عرب، بحرین، مصر، متحدہ عرب امارات، یمن، لیبیا اور مالدیپ نے پیر کو قطر سے سفارتی تعلقات توڑ لئے تھے۔ ان ممالک نے یہ قدم قطر کی دہشت گرد تنظیموں کی حمایت کرنے اور ایران سے اس کے تعلقات کے سلسلے میں اٹھایا ہے۔

قطر کا اعلان : سفارتی تعلقات توڑنے والے ممالک کے شہری بھی  ہمارے یہاں رہ سکتے ہیں

سب سے پہلے بحرین نے قطر سے اپنے سفارتی تعلقات توڑنے کا اعلان کیا۔ اس کے بعد دیگر ممالک نے سفارتی تعلقات ختم کرنے کا فیصلہ کیا۔ ان ممالک نے قطر پر القاعدہ، اسلامک اسٹیٹ اور اخوان المسلمون جیسے گروپوں کی حمایت کرنے اور خلیج کے ممالک میں گڑبڑی پیدا کرنے کا الزام لگایا ہے۔ قطر ان الزامات کو سرے سے مسترد کردیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز