دس سال کی عصمت دری متاثرہ ماں کیلئے معاوضہ کے مطالبہ سے متعلق عرضی پر سپریم کورٹ کا مرکز کونوٹس

سپریم کورٹ نے دس سالہ عصمت دری کا شکار بچی کو دس لاکھ روپے معاوضہ دینے سے متعلق عرضی پر مرکزی حکومت اور چنڈی گڑھ انتظامیہ سے آج جواب طلب کیا۔

Aug 18, 2017 09:02 PM IST | Updated on: Aug 18, 2017 09:02 PM IST

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے دس سالہ عصمت دری کا شکار بچی کو دس لاکھ روپے معاوضہ دینے سے متعلق عرضی پر مرکزی حکومت اور چنڈی گڑھ انتظامیہ سے آج جواب طلب کیا۔ عدالت عظمی نے گذشتہ 28جولائی کو میڈیکل بورڈ کی رپورٹ دیکھنے کے بعد عصمت دری کا شکار لڑکی کو 32ہفتہ کے حمل کو ضائع کرانے کی اجازت نہیں دی تھی۔ اس نابالغ بچی نے کل ہی ایک بچی کو جنم دیا ہے۔

جسٹس مدن بی لوکر اور جسٹس دیپک گپتا کی بنچ نے نیشنل لا سروسز اتھارٹی (نالسا) کے رکن سکریٹری اور چنڈی گڑھ ضلع جوڈیشل سروسز اتھارٹی کو نوٹس جاری کیا ہے۔ اس نابالغ متاثرہ کے معاملے میں عدالت دوست رہی سینئر وکیل اندرا جے سنگھ نے بنچ کے سامنے معاملے کا خصوصی ذکر کیا او رعدالت سماعت کے لئے تیار ہوگئی۔

دس سال کی عصمت دری متاثرہ ماں کیلئے معاوضہ کے مطالبہ سے متعلق عرضی پر سپریم کورٹ کا مرکز کونوٹس

سپریم کورٹ آف انڈیا: فائل فوٹو

محترمہ جے سنگھ نے سماعت کے دوران بہار کی عصمت دری کی متاثرہ کو دس لاکھ روپے معاوضہ دینے کے عدالت کے کل کے حکم کا ذکر کرتے ہوئے چنڈی گڑھ کی عصمت دری کی متاثرہ کو بھی دس لاکھ روپے کا معاوضہ دینا چاہئے کیوں کہ وہ ابھی صرف دس سال کی ہے اور وہ خودبچی کی دیکھ بھال صحیح طریقے سے نہیں کرسکتی۔ انہوں نے کہا کہ دس سال کی ایک ماں اپنے بچے کی دیکھ بھال نہیں کرسکتی ۔ اس عصمت دری کی متاثرہ کو کوئی رقم نہیں دی گئی ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز