جموں و کشمیر : ماں کی پکار سن کر پسیجا فٹ بالر سے دہشت گرد بنا ماجد خان کا دل ، خودسپردگی کی

جموں و کشمیر کے اننت ناگ میں دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ میں شامل ہوئے کشمیری فٹ بالر نے سیکورٹی ایجنسیوں کے سامنے خود سپردگی کردی ہے۔

Nov 17, 2017 02:38 PM IST | Updated on: Nov 17, 2017 02:39 PM IST

سری نگر : جموں و کشمیر کے اننت ناگ میں دہشت گرد تنظیم لشکر طیبہ میں شامل ہوئے کشمیری فٹ بالر نے سیکورٹی ایجنسیوں کے سامنے خود سپردگی کردی ہے۔ کشمیر کے ابھرتے ہوئے فٹ بالر ماجد خان (20) نے کچھ مہینے قبل ہی کھیل کو چھوڑ کر بندوق تھام لی تھی ۔ بتایا جاتا ہے کہ ماجد اپنے دوست یاور نثار کی تدفین میں شرکت کے بعد دہشت گرد تنظیم میں شامل ہوگیا تھا ۔ یاور ایک دہشت گرد تھا اور وہ اننت ناگ میں اگست میں سیکورٹی فورسیز کے ساتھ ایک تصادم میں مارا گیا تھا۔

ماجد کے دہشت گردوں کی صف میں شامل ہونے سے اس کے اہل خانہ اور دوست و احباب کافی پریشان تھے اور انہوں نے ماجد سے واپس لوٹ آنے کی اپیل کی تھی ۔ اس کی والدہ نے بھی ایک ویڈیو پیغام کے ذریعہ اپنے بیٹے سے جذباتی طو رپر لوٹنے کی اپیل کی تھی ۔ بتایا جارہا ہے کہ اپنی والدہ کی باتیں سن کر ماجد کا دل پسیج گیا اور اس نے خود سپردگی کردی ۔

جموں و کشمیر : ماں کی پکار سن کر پسیجا فٹ بالر سے دہشت گرد بنا ماجد خان کا دل ، خودسپردگی کی

اے کے 47 کےساتھ ماجد کی تصویر ہوئی تھی وائرل

اہل خانہ کو بیٹے کے دہشت گرد بن جانے کی اطلاع سوشل میڈیا کے ذریعہ ملی تھی۔ سوشل میڈیا پر ایک تصویر وائرل ہورہی تھی ، جس میں ماجد اے کے 47 کے ساتھ نظر آرہا تھا ۔ اہل خانہ کا کہنا ہے کہ اس کا برین واش کیا گیا ، جس کی وجہ سے اس نے یہ قدم اٹھایا ۔

بہترین گول کیپر ہے ماجد ، پڑھائی میں بھی تھا ذہین

ماجد خان جنوبی کشمیر کا رہنے والا ہے ۔ اہل خانہ کے مطابق وہ بچپن سے ہی پڑھائی اور کھیل کود میں کافی آگے آگے تھا ۔ 10 ویں اور 12 ویں کے امتحانات میں اس کے کافی اچھے نمبرات آئے تھے ۔ اسے فٹ بال کھیلنا کافی پسند تھا ۔ نویں جماعت میں ہی وہ اننت ناگ کے کرکٹ اور فٹ بال کلب میں شامل ہوگیا تھا ۔ اسے ٹیم کا بہترین گول کیپر مانا جاتا تھا۔

ایسے بن گیا دہشت گرد

بتایا جارہا ہے کہ ماجد اپنے ایک دوست کی وجہ سے دہشت گرد بن گیا تھا ۔ ماجد کا دوست یاور جولائی میں ایک دہشت گرد تنظیم میں شامل ہوگیا تھا ۔ تاہم ای ماہ بعد ہی سیکورٹی فورسیز نے یاور کو ایک تصادم میں مار گرایا تھا ۔ ماجد اپنے دوست کی موت سے اتنا غمزدہ ہوا کہ وہ بھی دہشت گردوں کی صف میں شامل ہوگیا۔ بتایا جاتا ہے کہ دہشت گرد بننے کیلئے غائب ہونے سے قبل ہی ماجد نے خود کو سماج سے دور کرلیا تھا ۔ وہ کسی سے بھی بات چیت کرنا پسند نہیں کرنے لگا تھا۔

والدہ کی جذباتی اپیل پر پسیج گیا ماجد کا دل

سوشل میڈیا پر ماجد خان کی والدہ عائشہ کی ایک ویڈیو وائرل ہورہی ہے ، جس میں وہ اپنے بیٹے سے واپس لوٹ آنے کی اپیل کررہی ہے ۔ ویڈیو میں اس کی والدہ کو یہ کہتے ہوئے سنا جاسکتا ہے کہ لوٹ آو اور ہماری جان لے لو ، اس کے بعد چلے جانا ، تم مجھے کس کے سہارے چھوڑ گئے ۔ بتایا جارہا ہے اس ویڈیو کی وجہ سے ہی ماجد کا دل پسیج گیا اور اس نے خود سپردگی کی ۔

دوستوں نے بھی فیس بک پر کی تھی لوٹ آنے کی اپیل

ماجد کے دوستوں نے سوشل میڈیا پر اس سے لوٹ آنے کی گزارش کی تھی۔ اس کے ایک دوست نے فیس بک پر لکھا آج میں نے تمہارے والد اور والدہ کو دیکھا ، وہ بری طرح سے ٹوٹ چکے ہیں ، پلیز لوٹ آو ۔ اس طرح اپنے والدین کو مت چھوڑو ، پلیز واپس آجاو ، تم اپنے والدین کی واحد اولاد ہو ، وہ تم سے بچھڑنا برداشت نہیں کرپائیں گے ، جب میں نے دیکھا تب وہ رو رہے تھے ، پلیز ماجد ان یلئے لوٹ آو، ہم سب تمہیں بہت پیار کرتے ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز