اترپردیش : بستی میں سنت کٹیر آشرم کے چار باباوں پر اجتماعی آبروریزی کا الزام ، مقدمہ درج ، جانچ شروع

Dec 21, 2017 12:03 AM IST | Updated on: Dec 21, 2017 12:06 AM IST

بستی : ہریانہ کے ڈیرہ سچا سودا کے بعد اب اترپردیش کے بستی کا سنت کٹیر آشرم ان دنوں سرخیوں میں ہیں ، جہاں بابا سوامی سچدانند سمیت چار مہنتوں پر آشرم کی سادھیوں کے ساتھ اجتماعی آبروریزی کا معاملہ سامنے آیا ہے ۔ الزام لگانے والوں میں سے دو سادھویاں چھتیس گڑھ کی رہنے والی ہیں جبکہ دیگر دو بستی کی ہی رہنے والی ہیں۔

سادھیوں کا الزام ہے کہ آشرم کے مہنت سوامی سچدانند اور ان کے عقیدتمندوں کے ذریعہ سالوں سے ان کی آبروریزی ، ان کے ساتھ مار پیٹ اور ان کا استحصال کیا جاتا رہا ہے ۔ صدر کوتوالی علاقہ کے امہٹ گھاٹ کے نزدیک واقع سنت کٹیر دھام آشرم میں بھکتی کے نام پر سادھویوں کے جنسی استحصال کا معاملہ سامنے آنے کے بعد  کھلبلی مچ گئی ہے ۔

اترپردیش : بستی میں سنت کٹیر آشرم کے چار باباوں پر اجتماعی آبروریزی کا الزام ، مقدمہ درج ، جانچ شروع

آشرم کی سادھویوں نے سوامی سچدا نند ، پرم چیتنانند ، وشواسانند اور گیان بیراگیانند پر لڑکیوں کو یرغمال بناکر اجتماعی آبروریزی اور مار پیٹ کا الزام لگایا ہے۔ متاثرہ کا کہنا ہے کہ آشرم میں ان کی اجتماعی آبروریزی کی جاتی تھی اور منع کرنے پر رسی میں باندھ کر اذیتیں دی جاتی تھیں۔

یہ واقعہ اس وقت سامنے آیا جب کسی طرح سے آشرم سے بھاگ کر چاروں ایس پی آفس پہنچیں اور اپنی آپ بیتی سنائی ۔ وہیں اس معاملہ کی سنجیدگی کو دیکھتے ہوئے ایس پی نے مقدمہ درج کرکے جانچ کی ہدایت دیدی ہے ۔ اس درمیان آشرم پہنچ کر کوتوالی پولیس نے معاملہ کی جانچ شروع کردی ہے ۔ معاملہ میں مقدمہ درج کرکے متاثرہ سادھویوں کا میڈیکل کرانے کا بھی حکم دیدیا گیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز