اتر پردیش میں دوسرے مرحلہ میں 65.5 فیصد ووٹنگ ، اترا کھنڈ میں 68 فیصد پولنگ

ریاست کے چیف الیکشن افسر کے دفتر کے مطابق 65.5فیصد ووٹ ڈالے گئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ووٹنگ پرامن طریقے سے مکمل ہوگئی۔ کہیں سے کسی طرح کے ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ہے

Feb 15, 2017 09:36 PM IST | Updated on: Feb 16, 2017 12:02 AM IST

لکھنؤ: اترپردیش اسمبلی کے دوسرے مرحلے میں 11 اضلاع کی 67 سیٹوں پر آج اکا دکا واقعات کے درمیان 65.5فیصد ووٹروں نے اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ ریاست کے چیف الیکشن افسر کے دفتر کے مطابق 65.5فیصد ووٹ ڈالے گئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ووٹنگ پرامن طریقے سے مکمل ہوگئی۔ کہیں سے کسی طرح کے ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ہے۔ ادھر اترا کھنڈ میں شام چھ بجے تک ریکارڈ 68 فیصد پولنگ درج  کی گئی ۔

ادھر، ریاست کے ایڈیشنل پولیس ڈائریکٹر جنرل (امن وقانون) دلجیت چودھری نے ریاست میں پرامن ووٹنگ ہونے کا دعوی کرتے ہوئے کہا کہ کہیں سے ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ملی۔سیکورٹی فورس کے جوان مکمل طور پر مستعد تھے۔ دوسرے مرحلہ کی پولنگ میں بریلی میں مرکزی وزیر سنتوش گنگوار، رام پور میں مختار عباس نقوی اور محمد اعظم خان، شاہ جہاں پور کے تلہر میں جتن پرساد اور امروہہ میں کرکٹر چیتن چوہان نے ووٹ ڈالے۔

اتر پردیش میں دوسرے مرحلہ میں 65.5 فیصد ووٹنگ ، اترا کھنڈ میں 68 فیصد پولنگ

اس مرحلے میں مجموعی طورپر 2.28 کروڑ ووٹروں میں سے 1.23 کروڑ مرد اور 1.04 کروڑ خواتین رائے دہندگان ہیں۔ ان کے لئے 23 ہزار سے زیادہ پولنگ مراکز بنائے گئے ہیں جن میں سے 5895 پولنگ مراکز کی نہایت حساس کے طورپر نشاندہی کی گئی ہے۔ ان میں مرکزی سیکورٹی فورس کو تعینات کیا گیا ہے۔

پولنگ مراکز پر سات بجے سے پہلے ہی ووٹروں کی چہل پہل شروع ہو گئی تھی۔ امیدواروں کے حامیوں نے تو پولنگ مراکز کے باہر صبح سویرے ہی ڈیرہ ڈال دیا تھا۔ ہلکی سردی کی وجہ سے ووٹنگ شروع ہونے کے وقت ووٹروں کی قطار چھوٹی تھی لیکن جوں جوں دھوپ کھلی ویسے ویسے قطار بڑھتی گئی۔ نوجوانوں میں پولنگ کے تعلق سے خاصا جوش و خروش نظر آرہا ہے۔ کئی پولنگ مراکز پر خواتین کافی تعداد میں ووٹ ڈال رہی ہیں۔

Loading...

حساس پولنگ مراکز پر سیکورٹی فورس کی چوکسی کافی بڑھا دی گئی تھی۔ ملی جلی آبادی والے پولنگ مراکز پر خاص چوکسی برتی جا رہی تھی۔ کچھ پولنگ مراکز پرای وی ایم کے خراب ہونے کی اطلاع ملی، لیکن انہیں ٹھیک کر لیا گیا۔ اس سے پولنگ کے متاثر ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔ اس مرحلے میں سوشلسٹ پارٹی (ایس پی) کے قدآور لیڈر اورریاست کے وزیر اعظم خاں ان کے بیٹے عبداللہ اعظم، وزیر محبوب علی، سابق مرکزی وزیر جتن پرساد، کرکٹر چیتن چوہان اور عمران مسعود سمیت 721 امیدواروں کی قسمت کا فیصلہ ہونا ہے۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز