بابری مسجد تنازع : رام للا کی وکیل رنجنا اگنی ہوتری نے کہا : نوبیل انعام کی دوڑ میں آنا چاہتے ہیں روی شنکر  

رام جنم بھومی اور بابری مسجد تنازع کیس میں رام للا براجمان کی وکیل رنجنا اگنی ہوتری نے شری شری روی شنکر پر شدید تنقید کی ہے اور کہا ہے کہ وہ نوبیل انعام پانے کے خواہشمند ہیں ۔

Oct 29, 2017 02:27 PM IST | Updated on: Oct 29, 2017 04:35 PM IST

لکھنو : رام جنم بھومی اور بابری مسجد تنازع کیس میں رام للا براجمان کی وکیل رنجنا اگنی ہوتری نے شری شری روی شنکر پر شدید تنقید کی ہے اور کہا ہے کہ وہ نوبیل انعام پانے کے خواہشمند ہیں ۔ لکھنو میں رنجنا نے الزام لگایا کہ شری شری روی شنکر کو تنازع سے متعلق حقائق کی معلومات ہی نہیں ہے ۔ وہ اس کی آر میں نوبیل انعام کی دوڑ میں آنا چاہتے ہیں۔

ای ٹی وی سے بات چیت میں رنجنا اگنی ہوتری نے کہا کہ الزام لگایا ہے کہ روی شنکراسلامی ممالک کے رابطے میں ہیں ۔ وہ نوبیل انعام پانے کے خواہشمند ہیں اور وہ اس کی دوڑ میں آنا چاہتے ہیں ۔ انہیں اس معاملہ میں حقائق کی کچھ بھی معلومات نہیں ہے ۔ رنجنا نے مزید کہا کہ روی شنکر کے اس بیان سے ہندوں کے جذبات مجروح ہوئے ہیں ۔ ہم کسی کی بھی ثالثی کیلئے تیار نہیں ہیں۔

بابری مسجد تنازع : رام للا کی وکیل رنجنا اگنی ہوتری نے کہا : نوبیل انعام کی دوڑ میں آنا چاہتے ہیں روی شنکر  

خیال رہے کہ شری شری روی شنکر کے آرٹ آف لیونگ فاونڈیشن نے کہا ہے کہ رام مندر بابری مسجد تنازع کو عدالت سے باہر حل کرنے میں مدد کیلئے فاونڈیشن کے بانی روی شنکر نرموہی اکھاڑہ کے آچاریہ رام داس سمیت متعدد اماموں اور سوامیوں سے رابطے میں ہیں۔ فاونڈیشن نے کہا ہے کہ تاہم ابھی کسی نتیجہ پر پہنچنا جلد بازی ہوگی اور یہ بات چیت حکومت کی جانب سے نہیں کی جارہی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز