مودی حکومت کی اقتصادی پالیسیوں کی نکتہ چینی حقائق پر مبنی نہیں : جینت سنہا

Sep 28, 2017 08:56 PM IST | Updated on: Sep 28, 2017 08:56 PM IST

نئی دہلی: بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر یشونت سنہا کی طرف سے مودی حکومت کی اقتصادی پالیسیوں پرسخت تنقید کا جواب دینے کے لئے حکومت نے آج ان کے بیٹے اور شہری ہوا بازی کے وزیر مملکت جینت سنہا کو اتارا، جنہوں نے کہا کہ بنیادی ڈھانچہ جاتی اصلاحات کے طویل مدتی اثرات کا ایک یا دو سہ ماہیوں کی جی ڈی ڈی شرح اور دیگر اقتصادی اعداد و شمار کی بنیاد پر تخمینہ لگانا موزوں نہيں ہے۔

سابق مرکزی وزیر خزانہ یشونت سنہا نے کل ایک انگریزی روزنامہ میں شائع ہونے والے اپنے ایک مضمون میں حکومت کی اقتصادی پالیسیوں بالخصوص نوٹ بندي اور اشیاء و خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) پرسخت تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ اس سے قومی معیشت کا بیڑہ غرق ہو گیا ہے۔ اس کے جواب میں مسٹر جینت سنہا نے آج ایک دوسرے انگریزی روزنامہ میں شائع ہونے والے اپنے مضمون میں حکومت کی پالیسیوں کو نئے ہندوستان کی معیشت کی تعمیر کرنے والا قرار دیتے ہوئے کہا کہ بنیادی ڈھانچہ جاتی اصلاحات کی نہ صرف ضرورت ہے بلکہ نئے ہندوستان کی تعمیر اور کروڑوں لوگوں کو روزگار فراہم کرنے کی بھی ضروری ہيں۔

مودی حکومت کی اقتصادی پالیسیوں کی نکتہ چینی حقائق پر مبنی نہیں : جینت سنہا

انہوں نے جی ایس ٹی ، نوٹ بندی اور ڈیجیٹل ادائیگی کو بنیادی تبدیلی لانے کی پہل قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے رسمی معیشت بنانے کی راہ ہموار ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ مودی حکومت نے 2014 سے شروع ہونے والی بنیادی ڈھانچہ جاتی اصلاحات سے 1991 میں شروع ہونے والی اقتصادی اصلاحات کو آگے بڑھا کر تیسری نسل کے اصلاحات کی سمت میں قدم بڑھا یا ہے۔ 1999-2004 کے دوران نیشنل ڈیموکریٹک الائنس ( این ڈی اے) کی حکومت کے دوران دوسری نسل کی بنیادی ڈھانچہ جاتی اصلاحات شروع ہوئی تھیں۔

مسٹر جینت سنہا کہا ہے کہ پہلی اور دوسری نسل کی اصلاحات کے مقابلے میں تیسری نسل کی اصلاحات سے تمام ہندوستانیوں کو بہتر متوازن معیار زندگی فراہم کرنے کے ساتھ ہی 21 ویں صدی کی ضروریات کو پورا کرنے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے لکھا ہے کہ حال ہی میں ہندوستانی معیشت کے چیلنجوں پر کئی مضامین لکھے گئے ہیں۔ بدقسمتی سے ان تمام مضامین میں بہت کم حقائق کو بنیاد بنا کر یہ نتیجے نکالے گئے ہیں اور ان میں معیشت میں تبدیلی لانے والی بنیادی ڈھانچہ جاتی اصلاحات کے بنیادی عنصر کو زير غور نہیں لایا گيا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز