گورکھا لینڈ کی گونج دہلی تک پہنچی ، جنتر منتر پر احتجاج ، ممتا حکومت کے خلاف جم کر نعرے بازی

Jul 09, 2017 02:21 PM IST | Updated on: Jul 09, 2017 02:21 PM IST

نئی دہلی: علاحدہ گورکھا لینڈ کا مطالبہ مغربی بنگال سے ہوتے ہوئے آج دہلی پہنچ گیا اور ہزاروں کی تعداد میں گورکھا مشترکہ جدہوجہد کمیٹی کے کارکنوں نے جنتر منتر پر احتجاج کیا۔ مظاہرین نے علاحدہ گوركھالینڈ کے مطالبہ کی حمایت اور مغربی بنگال حکومت کی مبینہ زیادتیوں کے خلاف جم کر نعرے بازی کی۔ مظاہرین کا جلوس راج گھاٹ سے شروع ہوکر جنتر منتر پر پہنچا۔

کمیٹی کے کارکنوں کا کہنا تھا کہ وہ علاحدہ گورکھا لینڈ سے کم کچھ بھی قبول نہیں کریں گے۔ اس لئے حکومت اگر اس مسئلے کے علاوہ کسی اور معاملے پر بات چیت کرنا چاہتی ہے تو بہتر ہو گا کہ وہ ایسا نہیں کرے۔ ان کا کہنا تھا کہ دوسرے لوگوں کی مانند ہی گورکھا لوگ بھی ہندوستان کا اٹوٹ حصہ ہیں ایسے میں علیحدہ ریاست کا مطالبہ کرنا ان کا حق ہے اس میں کچھ بھی غلط نہیں ہے۔

گورکھا لینڈ کی گونج دہلی تک پہنچی ، جنتر منتر پر احتجاج ، ممتا حکومت کے خلاف جم کر نعرے بازی

photo : ANI

دارجلنگ میں گزشتہ ایک ماہ سے گورکھا تحریک شدت والی شکل اختیار کر چکی ہے۔ گزشتہ جمعہ کو حالات تب اور بگڑ گئے جب گوركھالینڈ کے ایک حامی تاشي بھوٹیا کی لاش دارجلنگ کے مضافات سونادا میں ملی ۔ گورکھا جن مکتی مورچہ کا دعوی ہے کہ اس کے کارکن کی موت پولیس کارروائی کے نتیجے میں ہے۔ مورچہ کے ترجمان نیرج جنبا نے الزام لگایا ہے کہ پولیس نے اسے گولی مار دی ہے جس سے موقع پر ہی اس کی موت ہوگئی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز