یوگی حکومت سماجوادی پارٹی کارکنوں کو قتل اور عصمت دری جیسے سنگین مقدمات میں پھنسا رہی ہے : اکھلیش یادو

Aug 10, 2017 07:55 PM IST | Updated on: Aug 10, 2017 07:55 PM IST

لکھنؤ: سماج وادی پارٹی (ایس پی) کے صدر اور اتر پردیش کے سابق وزیر اعلی اکھلیش یادو نے الزام لگایا ہے کہ یوگی آدتیہ ناتھ حکومت ایس پی کے لیڈروں اور کارکنوں کو نشانہ بنا کر انہيں قتل اور عصمت دری کے مقدمات میں پھنسا رہی ہے تاکہ انہیں پنچایتوں کے عہدوں سے ہٹا یا جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے لیڈروں نے الزام لگایا تھا کہ پولس ا سٹیشنوں کو ایس پی لیڈران چلارہے ہيں۔ اب کون پولس اسٹیشنوں کو چلا رہا ہے؟۔ دن بہ دن جرائم کیوں بڑھ رہے ہیں۔ ڈائل 100 اب بدعنوانی کا اڈہ بن گیا ہے۔ ایس پی حکومت کے دوران یہ اپنے کام کے لئے جانا جاتا تھا۔ یہ ویسا ہی رام راج ہے جیسا بی جے پی ریاست میں چاہتی تھی۔

مسٹر اکھیلیش یادو نے آج یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ اور يا، قنوج، سدھارتھ نگر سمیت ریاست کے کئی علاقوں میں نوجوانوں اور ان کے خاندانوں کو نشانہ بنا کر ان پر تہمت لگائی جارہی ہے تاکہ انہیں مختلف جرائم میں پھنسایا جاسکے اور ضلع پنچایت، بلاک صدر اور پنچایت اراکین کے عہدوں پر قبضہ کیا جا سکے۔ ایس پی کے صدر نے کہا کہ سیاسی وجوہات سے سادہ لوح نوجوانوں پر قتل، اقدام قتل ، عصمت دری، وصولی اور زر فدیہ کی وصولی جیسے سنگین الزام لگائے جا رہے ہیں تاکہ انہیں مختلف مقدمات میں پھنسایا جا سکے۔

یوگی حکومت سماجوادی پارٹی کارکنوں کو قتل اور عصمت دری جیسے سنگین مقدمات میں پھنسا رہی ہے : اکھلیش یادو

قانون ساز کونسل کے ارکان کے ایس پی چھوڑ کے بی جے پی میں شامل ہونے پر انہوں نے کہا کہ "بی جے پی میں شامل ہونے سے کچھ پرساد ملنے کی امید ہے، اسلئے کچھ لوگ جا رہے ہیں۔ انہیں کچھ پرساد مل جائے گا چاہے پنچایت رکن ہی کیوں نہ بن جائیں۔ میں مکمل طور مطمئن ہوں کہ انہیں پنچایت رکن کے طور پر پرساد مل جاتا ہے تو انہیں نوجوانوں پر کوئی مجرمانہ معاملے درج کرنے کی ضرورت نہیں ہو گی"۔

انہوں نے کہا کہ بی جے پی حکومت نے دعوی کیا ہے کہ چار ماہ کی حکومت کے دوران زمین مافیاؤں سے ہزاروں ایکڑ زمین واگزارکرائی ہے۔ حکومت نے آج تک یہ نہیں بتایا ہے کہ کتنے زمین مافیا پکڑے گئے اور کتنے كو جیل ہوئی۔؟ انہوں نے پوچھا کہ کیا کسی لینڈ مافیا کو گزشتہ چار ماہ میں جیل ہوئی ہے؟۔ مسٹر اکھیلیش یادو نے کسی کا نام لیے بغیر کہا کہ ایک زمین مافیا لکھنؤ میں تھا۔ اس نے ایس پی رکن کے طور پر قانون ساز کونسل سے استعفی دے دیا ہے اور بی جے پی میں شامل ہو گئے ہیں۔ ان کا اشارہ حال ہی میں ایس پی چھوڑ کر بی جے پی میں شامل ہونے والے بقل نواب کی طرف تھا۔ انہوں نے کہا کہ اب ان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں ہو رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے پاس اطلاعات ہیں کہ انہیں ریاست کی شہری ترقیات کا محکمہ سونپا جائے گا۔

شمالی ہندوستان میں حال ہی میں "چوٹی کاٹنے " کی افواہ کے پیچھے بی جے پی کو مجرم ٹھہراتے ہوئے ایس پی کے صدر نے کہا کہ یہ ویسی ہی افواہ ہے جیسے بھگوان گنیش نے دودھ پی لیا تھا۔ اس سے پہلے بھی بی جے پی حکومت نے اسمبلی میں دھماکہ خیز مواد ملنے کی ہائے توبہ کی تھی۔ لیکن سب جھوٹ نکلا۔ انہوں نے کہا کہ دھماکہ خیز مادہ ملنے کا معاملہ اٹھانے کے پیچھے بی جے پی حکومت کا واحد مقصد صرف سابق اراکین اسمبلی، صحافیوں اور دیگر لوگوں کو روکنے کے لئے تھا۔ یہ سب کچھ لوگوں کی توجہ ہٹانے کے لیے کیا جا رہا ہے تاکہ بی جے پی کے کاموں پر کوئی انگلی نہ اٹھا سکے۔

سابق وزیر اعلی نے لکھنؤ میٹرو اور لکھنؤ-آگرہ ایکسپریس وے کے تعمیراتی کاموں میں کسی قسم کی کوتاہی برتے جانے کے الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہا کہ "لکھنؤ میٹرو کو ایک ریکارڈ وقت میں بنایا گیا تھا اور کوئی تعمیر کی غلطی نہیں ہوئی تھی۔ اس کے علاوہ آگرہ-لکھنؤ ایکسپریس وے میں زیادہ تر حادثے حد سے زیادہ رفتار کی وجہ سے ہوئےہیں"۔ انہوں نے ریاستی حکومت سے مطالبہ کیا کہ ریاست کے دیگر علاقوں میں بھی میٹرو کی تعمیر کا کام شروع کیا جائے۔ بنارس میں میٹرو کا کام شروع کیا جا سکتا ہے۔وزیر اعظم نریندر مودی آئندہ لوک سبھا انتخابات کے دوران دعوی کر سکیں گے کہ انہوں نے اپنے پارلیمانی حلقہ کو میٹرو دے دیا ہے۔

انہوں نے طنز کیا کہ نیتی آیوگ اب پوروانچل ایکسپریس وے کی تعمیر کرائے گا۔ ایس پی حکومت نے 22 ماہ میں آگرہ-لکھنؤ ایکسپریس وے کا کام مکمل کیا تھا۔ بی جے پی پوروانچل ایکسپریس وے کا کام اب 21 مہینوں میں مکمل کر کے دکھائے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز