اکھلیش حکومت کوزبردست دھچکا ، ریزرو سیٹوں پر الیکشن نہیں لڑ سکیں گی 17 پسماندہ ذاتیں

الہ آباد ہائی کورٹ نے ان سترہ پسماندہ ذاتوں کو ریزرو سیٹوں سے الیکشن لڑنے پر پابندی عائد کردی ہے جنہیں حال ہی میں شیڈولڈ کاسٹ میں شامل کرنے کی سفارش کی گئی تھی

Jan 24, 2017 07:01 PM IST | Updated on: Jan 24, 2017 07:01 PM IST

الہ آباد : الہ آباد ہائی کورٹ نے سما ج وادی پارٹی حکومت کو آج زبردست دھچکا دیتے ہوئے ان سترہ پسماندہ ذاتوں کو ریزرو سیٹوں سے الیکشن لڑنے پر پابندی عائد کردی ہے جنہیں حال ہی میں شیڈولڈ کاسٹ میں شامل کرنے کی سفارش کی گئی تھی۔ چیف جسٹس ڈی بی بھونسلے اور جسٹس یشونت ورما کی بنچ نے ڈاکٹر بی آر امبیڈکر گرنتھالیہ جن کلیان سوسائٹی کی طرف سے دائر ایک مفاد عامہ کی عرضی پر سماعت کے بعد یہ حکم دیا۔

گذشتہ 22 دسمبر کو ریاستی حکومت نے سترہ پسماندہ ذاتوں کو شیڈولڈ کاسٹ میں شامل کرنے کی سفارش کرتے ہوئے انہیں اس زمرہ کی سہولیات دینے کا بھی حکم دیاتھا۔ عرضی میں کہا گیا تھا کہ ریاستی حکومت اگر ان ذاتوں کو شیڈولڈ کاسٹ کا کاسٹ سرٹیفیکٹ جاری کرد ے گی تو وہ ریزر و سیٹوں پر الیکشن لڑنے کے حقدار ہوجائیں گے ۔ عدالت نے اس دلیل کو تسلیم کرتے ہوئے ریاستی حکومت کو ان سترہ ذاتوں کے لئے شیڈولڈ کاسٹ سرٹیفکٹ جاری نہیں کرنے کا بھی حکم دیا۔عدالت نے سماجی بہبود محکمہ کے چیف سکریٹری سے حکم پر سختی سے عمل درآمد کے لئے بھی کہا ہے۔

اکھلیش حکومت کوزبردست دھچکا ، ریزرو سیٹوں پر الیکشن نہیں لڑ سکیں گی 17 پسماندہ ذاتیں

عرضی گذار کا کہنا تھا کہ آئین شیڈولڈ کاسٹ کی فہرست میں ذاتوں کو شامل کرنے یا حذ ف کرنے کا حق مرکزی حکومت کو دیا ہے۔ ریاستی حکومت نے اپنی طرف سے ان ذاتوں کو شامل کرکے آئین کی دفعہ 341 کی خلاف ورزی کی ہے۔ ریاستی حکومت اس طرح کا فیصلہ نہیں کرسکتی ہے۔

اکھلیش یادو حکومت نے کہار، کشیپ، کیوٹ، نشاد، بند، بھر، پرجاپتی، راج بھر، بھاتم، گوڑ، تورا، مانجھی، ملاح، کمہار، دھیمر اور مچھوا ذاتوں کو شیڈولڈ کاسٹ میں شامل کرنے کی سفارش مرکزی حکومت کو بھیج دی تھی۔ اس کے ساتھ ہی ریاستی حکومت نے ان ذاتوں کو صوبے میں شیڈولڈ کاسٹ ذات کو ملنے والی سہولیات فراہم کرنے کا حکم بھی دیاتھا۔ عدالت نے اس معاملے کی اگلی سماعت کے لئے نو فروری کی تاریخ مقرر کی ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز