شیعی وقف بورڈ چیئرمین وسیم رضوی کی ہمایوں کے مقبرے کو گرانے کی تجویز غیرمہذب اورتشویشناک

مغل حکمراں ہمایوں کے مقبرے کو گرا کر اس کی زمین مسلمانوں کو قبرستان کے لیے سونپ دینے کی شیعہ وقف بورڈ کے مسٹر وسیم رضوی کی تجویز کو امبیڈکر نیشنل کانگریس کے صدر محمد کاظم علی خان نے تاریخ کے ساتھ مہذب قوموں کے پیش آنے کی تہذیب سے سنگین مذاق قراردیا ہے۔

Oct 29, 2017 12:29 PM IST | Updated on: Oct 29, 2017 12:29 PM IST

نئی دہلی:  مغل حکمراں ہمایوں کے مقبرے کو گرا کر اس کی زمین مسلمانوں کو قبرستان کے لیے سونپ دینے کی شیعہ وقف بورڈ کے مسٹر وسیم رضوی کی تجویز کو امبیڈکر نیشنل کانگریس کے صدر محمد کاظم علی خان نے تاریخ کے ساتھ مہذب قوموں کے پیش آنے کی تہذیب سے سنگین مذاق قراردیا ہے۔ یہاں جاری ایک بیان میں مسٹر کاظم علی خاں نے کہا کہ کسی مسئلے کو حل کرنے کے لئے تعمیری سوچ کی جگہ تخریبی ذہن سے کام لینا کم سے کم ان مہذب لوگوں کو زیب نہیں دیتا جو سماجی زندگی میں اہم رول ادا کرنے کے دعوےدار ہیں۔

انہوں نے مسٹر رضوی کی تجویز کو دوٹوک مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ہندستانی مسلمانوں کے ساتھ ساتھ دوسرے مہذب اہل وطن بھی ایسی کسی سوچ سے ہرگز اتفاق نہیں کریں گے۔  مسٹر کاظمی نے حکومت ہند اور اقلیتی امور کے مرکزی وزیر مختار عباس نقوی پر زور دیا کہ وہ اقلیتوں کے معاملات میں ایسے لوگوں کی رائے ہرگز قابل اعتنا نہ سمجھیں جو حکمراں جماعت کی خوشنودی اور اپنے محدود مفادات کے لئے کام کرتے ہیں اور ملک و ملت دونوں کو نقصان پہنچاتے ہیں۔

شیعی وقف بورڈ چیئرمین وسیم رضوی کی ہمایوں کے مقبرے کو گرانے کی تجویز غیرمہذب اورتشویشناک

انہوں نے کہا کہ ملک کی تمام تاریخی عمارات و مقامات کو انسانی شرارتوں اور قدرتی آفات سے بچانا ایک اجتماعی ذمہ داری ہے جو حکومت سمیت ایک سے زیادہ کاندھوں پر ہے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز