بی جے پی کے پاس کیا ہے یوپی جیتنے کا منصوبہ؟ آج رات 8 بجے دیکھیں امت شاہ کا سب سے بڑا انٹرویو

Jan 29, 2017 12:01 PM IST | Updated on: Jan 29, 2017 12:08 PM IST

نئی دہلی۔ اترپردیش کے اقتدار سے 17 سال سے باہر بی جے پی اس بار اسمبلی انتخابات میں پورے دم خم کے ساتھ اتررہی ہے۔ وزیر اعظم نریندر مودی کے کاموں اور پارٹی کے قومی صدر امت شاہ کی حکمت عملی کے دم پر بی جے پی خود کو جیت کا مضبوط دعویدار بتا رہی ہے۔ ایسے میں امت شاہ نے نیٹ ورک 18 کو خصوصی انٹرویو دیا جس میں انہوں نے بتانے کی کوشش کی کہ وہ کیوں بی جے پی کی جیت کے دعوے کر رہے ہیں؟

اس انٹرویو میں امت شاہ نے اپنی کئی انتخابی حکمت عملی کا بھی انکشاف کیا ہے۔ انہوں نے بتایا ہے کہ وہ مخالف جماعتوں سماج وادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کو کن مسائل پر گھیریں گے۔

بی جے پی کے پاس کیا ہے یوپی جیتنے کا منصوبہ؟ آج رات 8 بجے دیکھیں امت شاہ کا سب سے بڑا انٹرویو

بی جے پی موجودہ اکھلیش یادو کی حکومت پر غنڈہ راج ہونے کا الزام لگا رہی ہے، ایسے میں ان کے پاس غنڈہ راج کو ختم کرنے کا کیا پلان ہے۔

شاہ نے یہ بھی بتایا کہ وہ وزیر اعلی اکھلیش کی ترقی کے دعوے کا سچ عوام کے سامنے کس طرح رکھیں گے۔ ساتھ ہی ان کی پارٹی کے پاس اتر پردیش کو ملک کی امیر ریاستوں کے زمرے میں لا کر شاندار ریاست بنانے کا  کیا منصوبہ ہے، وہ ریاست کے سب سے زیادہ پسماندہ مغربی حصے کی ترقی کیسے کریں گے، ان جیسے تمام سوالات پر امت شاہ نے بیباکی سے اپنی رائے ظاہر کی ہے۔

امت شاہ کا اب تک کا سب سے بڑا انٹرویو نیٹ ورک 18 کے ای ٹی وی کے تمام نیوز چینلز پر اتوار (29 جنوری) رات 8 بجے نشر ہو گا۔ ساتھ ہی اس خصوصی انٹرویو کو سی این این نیوز 18 اور نیوز 18 انڈیا پر بھی اتوار (29 جنوری) رات 9 بجے نشر کیا جائے گا۔

یوپی میں سات مراحل میں ووٹنگ

اتر پردیش میں 11 فروری سے 8 مارچ کے درمیان سات مراحل میں اسمبلی انتخابات ہو رہے ہیں۔ کانگریس اور سماج وادی پارٹی کے اکھلیش دھڑے کے درمیان گٹھ بندھن کے باوجود کثیر رخی مقابلہ دیکھنے کو ملے گا۔

مرکز میں مکمل اکثریت کی حکومت بنانے کے بعد جس طرح سے بی جے پی کو دہلی اور بہار میں کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا ہے، ویسے میں اتر پردیش کا الیکشن وزیر اعظم نریندر مودی کے لئے کسی چیلنج سے کم نہیں ہے۔ وزیر اعلی کے چہرے کو سامنے نہ لا کر ایک بار پھر بی جے پی نے وزیر اعظم مودی کے چہرے پر داؤں کھیلا ہے۔ اس کا کتنا فائدہ اسے ان انتخابات میں ملے گا وہ 11 مارچ کو سامنے آ ہی جائے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز