اے ایم یو کی اسکالرکا تعلیمی اداروں میں طالبات کو سیلف ڈیفینس کی تعلیم دینے کا مطالبہ

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی شعبہ دینیات کی ریسرچ اسکالر کہکشاں خانم نے گذشتہ روز سوشل میڈیا کے پلیٹ فارم فیس بک پر ایک پوسٹ شیئر کیا جس میں ملک میں خواتین پر بڑھتے ہوئے تشدد کے خلاف تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے ظالموں کو اب خواتین خود سبق دیں اور اس کے لئے سیلف ڈفینس کرنا سیکھیں۔

Jun 12, 2017 12:29 PM IST | Updated on: Jun 12, 2017 12:29 PM IST

علی گڑھ ۔ ملک میں خواتین پر مسلسل بڑھتے تشدد اور استحصال کے معاملوں کو دیکھتے ہوئے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی کی سابق طلباء لیڈر و ریسرچ اسکالر کہکشاں خانم نے سوشل میڈیا پر پوسٹ ڈال کر ایسے تشدد کرنے والوں سے خواتین کو خود نپٹنے کی نصیحت دیتے ہوئے کہا ہے کہ  ایسے لوگوں کو سخت سے سخت سبق دیا جائے ۔ نہ رہے گا بانس نہ بجے گی بانسری ۔ انھوں نے سیلف ڈیفنس کی تیاری کی طرف اشارہ کیا ہے۔

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی شعبہ دینیات کی ریسرچ اسکالر کہکشاں خانم نے گذشتہ روز سوشل میڈیا کے پلیٹ فارم فیس بک پر ایک پوسٹ شیئر کیا جس میں ملک میں خواتین پر بڑھتے ہوئے تشدد کے خلاف تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے ظالموں کو اب خواتین خود سبق دیں اور اس کے لئے سیلف ڈفینس کرنا سیکھیں۔

اے ایم یو کی اسکالرکا تعلیمی اداروں میں طالبات کو سیلف ڈیفینس کی تعلیم دینے کا مطالبہ

انہوں نے کہا کہ واقعات رونما ہوتے ہیں اور لوگ احتجاج کرکے ایسے معاملوں پر اپنی ذمہ داری پوری کرلیتے ہیں لیکن اب عملی اقدام کی ضرورت ہے ۔

kehkashan khanam

Loading...

میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہکشاں خانم کہتی ہیں کہ میرا ماننا ہے کہ تعلیمی اداروں میں طالبات کو سیلف ڈیفینس کی تعلیم دی جائے اور باقاعدہ انھیں یہ ہنر سکھائے جائیں کیونکہ انکے تحفظ کے لئے اب ہر جگہ پولیس اور اہل خانہ موجود نہیں رہیں گے۔ ایسے میں انھیں اپنی عزت خود ہی بچانی ہے۔کہکشاں خانم نے حال ہی میں ملک میں رونما ہوئے واقعات پر بھی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے انھیں سماج کے لئے بدنما داغ قرار دیا ہے ۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز