بہارمیں جس طرح جمہوریت کا قتل ہوا ، وہ ملک کے مستقبل کیلئے بہتر نہیں : اے ایم یو طلبہ

Jul 30, 2017 01:58 PM IST | Updated on: Jul 30, 2017 01:58 PM IST

علی گڑھ : ملک میں نفرت کی سیاست اور بہار کے سیاسی منظر نامہ پر علی گڑھ مسلم یونیورسٹی طلبہ یونین کے سابق عہدیداران نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے نتیش کمار اور بھارتیہ جنتا پارٹی کو ملک کی سیاست کے لئے خطرہ قرار دیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ جس طرح سے بہارمیں جمہوریت کا قتل ہوا ہے، وہ ملک کے مستقبل کے لئے بہتر نہیں ہے۔ بہار کے عوام نے مودی مخالف ووٹنگ کرکےعظیم اتحاد کو کامیاب بنایا تھا ، لیکن نتیش کمار نے بہار کےعوام کو دھوکہ دیا ۔ طلبہ نے کہا کہ بہار میں عظیم اتحاد کونفرت کی سیاست کے خلاف اکثریت حاصل ہوئی تھی ۔

علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں بہار کے طلبہ کی بڑی تعداد ہے ۔بہار میں سیاسی تبدیلی کے بعد طلبہ میں شدید غم وغصہ ہے ۔ طلبہ کا کہنا ہے کہ آج ملک کو نفرت کی آگ میں جھونکنے والی بھارتیہ جنتا پارٹی سے ہاتھ ملا کر نتیش کمار نے ملک میں بننے والے عظیم اتحاد کو کمزور کرنے کا کام کیا ہے، جس کے لئے انھیں کبھی معاف نہیں کیا جائے گا۔ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے طلبہ یونین کے سابق صدر فیض الحسن نے کہا کہ ملک میں عجیب سیاست ہو رہی ہے ۔ انسان کو انسان کا دشمن بنایا جا رہا ہے ۔ یہاں ملک کا صدر جمہوریہ پورے ملک کا نہ ہوکر کسی ایک طبقہ کا بتایا جا رہا ہے۔ اس سے زیادہ خراب بات اور کیا ہوگی۔

بہارمیں جس طرح جمہوریت کا قتل ہوا ، وہ ملک کے مستقبل کیلئے بہتر نہیں : اے ایم یو طلبہ

بہار سے تعلق رکھنے والے سینر طلبہ لیڈرابوالفراح شازلی نے کہا کہ نتیش کمار نے بہار میں موقع پرست سیاست کرکےعوام کو دھوکہ دیا ہے ۔ بہار کے عوام نے فرقہ پرستی کے خلاف ایک سیکولر جماعت کی حمایت کی تھی ، لیکن نتیش کمار نے جس تھالی میں کھایا ، اسی میں چھید کردیا۔ انھوں نے کہا کہ آج نتیش کمار نہ رہ کرکرسی کمار ہوگئے ہیں۔ انھوں نے کہا کہ اے ایم یو میں زیر تعلیم بہار کے طلبہ کو ایسا محسوس ہو رہا ہے کہ انھیں ٹھگا گیا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز