اگر کشمیر میں پتھرباز ہتھیار اٹھا لیں ، تو ہم وہی کریں گے جو کرنا چاہتے ہیں : آرمی چیف بپن راوت

May 28, 2017 04:43 PM IST | Updated on: May 28, 2017 04:43 PM IST

سری نگر : ہندوستانی فوج پر کشمیر میں پتھراؤ پر پہلی مرتبہ آرمی چیف بپن راوت نے کہا ہے کہ جب لوگ جب ہم پر پتھراؤ کر رہے ہوں اور پٹرول بم پھینک رہے ہوں ، تو میں اپنے جوانوں سے صرف انتظار کرنے اور مرنے کے لئے نہیں کہہ سکتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پتھر بازی کا جواب دیا جانا ضروری ہے،

نیوزایجنسی پی ٹی آئی سے خاص بات چیت میں آرمی چیف نے کہا کہ ہندوستانی فوج کشمیر میں گندے کھیل کا سامنا کر رہی ہے، اس سے نمٹنے کیلئے انوویٹو طریقہ استعمال کئے جانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے فوج کے ایک افسر کی طرف سے پتھربازوں سے اپنے دفاع کے لئے جیپ کے بونٹ پر کشمیری نوجوان کو باندھ کر گھمانے کے واقعہ کو صحیح ٹھہرایا۔

اگر کشمیر میں پتھرباز ہتھیار اٹھا لیں ، تو ہم وہی کریں گے جو کرنا چاہتے ہیں : آرمی چیف بپن راوت

راوت نے کہاکہ میجر ليتل گگوئی کو ایوارڈ دئے جانے کا بنیادی مقصد یہی ہے کہ جب بھی کورٹ آف انكوائري ختم ہو، ہمارے جانباز نوجوان حکام کی خود اعتمادی بڑھی ہوئی ہو۔ یہ نوجوان کافی مشکل حالات میں دہشت گردی سے متاثرہ اس علاقہ میں سیکورٹی انتظامات کو دیکھتے ہیں۔

جنرل راوت نے کہاکہ لوگ ہم پر پتھر پھینک رہے ہیں، پیٹرول بم پھینک رہے ہیں، ایسے میں اگر میرے جوان مجھ سے پوچھتے ہیں کہ کیا کریں، تو کیا مجھے یہ کہنا چاہئے، انتظار کرو اور مر جاؤ، میں آپ کے لئے ترنگے کے ساتھ ایک اچھا کفن لے کر آوں گا اور تمہاری لاش پورے احترام کے ساتھ تمہارے گھر بھیج دوں گا، کیا مجھے ایسا بطور آرمی چیف اپنے جوانوں سے کہنا چاہئے؟ مجھے اپنی فوج کے جوانوں کی خود اعتمادی برقرار رکھنی ہے۔

انہوں نے کہاکہ اچھا ہوتا کہ مظاہرین پتھر پھینکنے کی بجائے ہم پر ہتھیاروں سے فائرنگ کرتے، تب میں زیادہ خوش هوںگا، تب میں وہ کر سکوں گا ، جو ہم واقعی چاہتے ہیں، اگر کسی ملک کے عوام میں فوج کا خوف ختم ہو جائے ، تو وہ ملک ختم ہونے کی طرف بڑھ رہا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز