یوپی اور اترا کھنڈ میں مودی کی لہر، پنجاب میں کیپٹن کا جلوہ ، منی پور اور گوا میں کانگریس سب سے بڑی پارٹی

کانگریس کے لیے بھی یہ الیکشن کافی خوشگوار رہا ۔ کیونکہ جہاں پنجاب کے اقتدار میں اس کی واپسی ہوئی وہیں منی پور اور گوا میں سب سے بڑی پارٹی بن کر ابھری

Mar 11, 2017 07:19 PM IST | Updated on: Mar 11, 2017 08:29 PM IST

نئی دہلی: 2014 کے لوک سبھا انتخابات کے منظر پر چھا جانے والے وزیر اعظم نریندر مودی کی لہر آج ایک مرتبہ پھر اتر پردیش اور اتراکھنڈ میں دیکھنے کو ملی ہے۔ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) اترپردیش میں 14 سال کے طویل وقفے کے بعد ایک بار پھر تاریخی جیت کے ساتھ اقتدار میں آئی تو وہیں پہاڑی ریاست اتراکھنڈ میں بھی بی جے پی کانگریس کو پیچھے چھوڑ کر اقتدار پر قبضہ جمانے میں کامیاب ثابت ہوگئی ۔ تاہم کانگریس کے لیے بھی یہ الیکشن کافی خوشگوار رہا ۔ کیونکہ جہاں پنجاب کے اقتدار میں اس کی واپسی ہوئی وہیں منی پور اور گوا میں سب سے بڑی پارٹی بن کر ابھری ۔

اترپردیش میں بی جے پی کی جیت کے بعد جہاں پارٹی لیڈران وزیر اعظم مودی اور امت شاہ کی تعریف کے پل باندھ رہے ہیں ، وہیں ملک بھر میں کارکنان جشن منارہے ہیں ۔

یوپی اور اترا کھنڈ میں مودی کی لہر، پنجاب میں کیپٹن کا جلوہ ، منی پور اور گوا میں کانگریس سب سے بڑی پارٹی

اترپردیش میں بی جے پی نے403 سیٹوں میں سے 325 سیٹ حاصل کرکے تاریخی کامیابی حاصل کی ہے۔ کانگریس ایس پی اتحاد 45 اور بہوجن سماج وادی پارٹی 21 سیٹوں پر ہی اکتفا کرنا پڑا ۔ جبکہ دیگر پارٹیوں اور آزاد امیدوار کے کھاتے میں پانچ سیٹیں گئیں۔ جہاں ایک طرف وزیر اعظم نریندر مودی کے اسمبلی حلقہ وارانسی کی سبھی سیٹوں پر بی جے پی نے کامیابی حاصل کی ، تو کانگریس کا گڑھ سمجھے جانے والے امیٹھی میں بھی جیت کا مزہ چکھا ۔

Loading...

UP copy

پنجاب میں کانگریس نے117 سیٹوں میں سے 77سیٹوں پر کامیابی حاصل کرکے واضح اکثریت حاصل کرلی ہے ۔ جبکہ یہاں کی انتخابی سیاست میں پہلی مرتبہ قدم رکھنے والی عام آدمی پارٹی (آپ) 22 سیٹ جیت کر دوسرے نمبر پر رہی۔ تاہم بی جے پی اور اکالی دل کو کافی کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔ بی جے پی اور اکالی دل اتحاد کے کھاتے میں صرف 18 سیٹیں ہی آئیں۔

Punjab copy

اترا کھنڈ میں حکمراں کانگریس کو کراری شکست کا سامنا کرنا پڑا ۔ وہاں پر بی جے پی نے70 سیٹوں میں سے 57 سیٹیں حاصل کرکے واضح اکثریت حاصل کرلی ہے۔ جبکہ کانگریس کے کھاتے میں صرف گیارہ سیٹیں ہی گئیں۔ دیگر کو دو سیٹیں ملیں۔ اترا کھنڈ میں کانگریس کو 2012 کے الیکشن کے مقابلہ میں بڑا جھٹکا لگا ۔ 2012 میں کانگریس نے اترا کھنڈ میں 32 سیٹیں جیتی تھیں۔

UK copy

گوا میں بھی کانگریس کے لئے راحت بھری خبر رہی اور وہ40 سیٹوں کی اسمبلی میں سے 17 سیٹوں کے ساتھ سب سے بڑی پارٹی بن کر سامنے آئی ہے۔ جبکہ حکمراں بی جے پی کو جھٹکا لگا اور صرف 13 سیٹوں پر ہی کامیابی حاصل کرسکی ۔ پہلی مرتبہ گوا انتخابات میں قدم رکھنے والی عام آدمی پارٹی کا کھاتہ بھی نہیں کھل سکا ۔ جبکہ دیگر پارٹیوں اور آزاد امیدوار کے کھاتے میں 10 سیٹیں گئیں ۔ یہاں پر کانگریس کو حکومت بنانے کیلئے چار سیٹوں کی ضرورت پڑے گی اور اس کو کسی نہ کسی پارٹی سے حمایت لینی ہوگی یا پھر آزاد امیدوار کا سہارا لینا پڑے گا۔

Goa copy

منی پور میں بھی کانگریس اپنی حکومت بچانے میں تقریبا کامیاب رہی اور 60 سیٹوں میں سے 28 سیٹیں حاصل کرکے سب سے بڑی پارٹی کے طور پر ابھری ۔ تاہم 2012 کے انتخابات کے مقابلہ میں اس کو نقصان اٹھانا پڑا ۔ 2012 میں کانگریس کے پاس 42 سیٹیں تھیں۔ تاہم بی جے پی کیلئے منی پور کے نتائچ اچھے ثابت ہوئے اور اس نے پہلی مرتبہ سیٹوں پر کامیابی حاصل کی ۔ جبکہ 11 سیٹیں دیگر کے کھاتہ میں گئیں ۔ یہاں پر کانگریس کو حکومت بنانے کیلئے تین سیٹوں کی ضرورت پڑے گی اور اس کو کسی نہ کسی پارٹی یا پھر آزاد امیدوار کا سہارا لینا پڑے گا۔

Manipur copy

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز