کشمیر میں برفانی تودے گرنے سے فوجی میجر سمیت 5 افراد ہلاک، دس اضلاع میں کنٹرول روم قائم

Jan 25, 2017 06:52 PM IST | Updated on: Jan 25, 2017 06:53 PM IST

سری نگر۔ وادی کشمیر میں برفانی تودے گرآنے کے دو الگ الگ واقعات میں ایک فوجی میجر سمیت 5 افراد لقمہ اجل بن گئے ہیں۔ برفانی تودے گرآنے کے واقعات شمالی کشمیر کے سرحدی علاقہ تلیل اور وسطی کشمیر کے مشہور سیاحتی مقام سونہ مرگ میں پیش آئے ہیں۔ خیال رہے کہ وادی میں گذشتہ 48 گھنٹوں کے دوران بھاری برف باری ہوئی ہے ۔ تلیل میں برفانی تودے کے گرنے کے نتیجے میں ایک ہی کنبہ کے چار افراد زندہ دب کر لقمہ اجل بن گئے ہیں۔ وسطی کشمیر کے سونہ وار میں پیش آنے والے واقعہ میں ایک فوجی میجر ہلاک ہوگیا ہے۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ سونہ وار میں قائم ایک فوجی کیمپ پر بدھ کی علی الصبح بھاری برکم برفانی تودا گرآیا جس کے نتیجے میں 11 فوجی اہلکار دب گئے۔ انہوں نے بتایا  کہ واقعہ کے بعد شروع کی گئی بچاؤ مہم کے دوران سبھی گیارہ اہلکاروں کو بے ہوشی کی حالت میں برآمد کرکے اسپتال منتقل کیا گیا ‘۔

سرکاری ذرائع نے بتایا کہ اسپتال میں فوجی میجر امت ساگر دم توڑ گیا۔ گذشتہ برس خطہ لداخ میں واقع دنیا کے بلند ترین میدان جنگ سیاچن میں ایک فوجی کیمپ کے برفانی تودے کی زد میں آنے سے 11 فوجی اہلکار لقمہ اجل بنے تھے۔ شمالی کشمیر کے تلیل علاقہ میں برفانی تودہ گرآنے کے نتیجے میں ایک ہی کنبے کے چار افراد زندہ دب کر لقمہ اجل بن گئے ہیں۔ سرکاری ذرائع نے بتایا ’گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ہونے والی بھاری برف باری کے نتیجے میں تلیل کے بڈوگام گاؤں میں معراج الدین کا گھر برفانی تودے کی زد میں آگیا‘۔ انہوں نے بتایا ’اس واقعہ میں 55 سالہ معراج الدین کے علاوہ اُن کی 50 سالہ بیوی عزی، 22 سالہ بیٹا عرفان اور 19 سالہ بیٹی گلشن زندہ دب کر لقمہ اجل بن گئے‘۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ کنبے کے سبھی چار اراکین کی لاشیں برآمد کی گئی ہیں۔ اس دوران انتظامیہ نے گذشتہ 48 گھنٹوں کے دوران ہونے والی بھاری برف باری کے پیش نظر وادی کے بالائی علاقوں میں برفانی تودوں کے گرآنے کی وارننگ جاری کردی ہے۔ انتظامیہ نے لوگوں کی مدد کے لئے وادی کے سبھی دس اضلاع میں کنٹرول روم قائم کئے ہیں۔

کشمیر میں برفانی تودے گرنے سے فوجی میجر سمیت 5 افراد ہلاک، دس اضلاع میں کنٹرول روم قائم

علامتی تصویر: رائٹرز

محکمہ موسمیات نے وادی میں درمیانہ سے بھاری درجے کی برف باری کا سلسلہ 28 جنوری تک جاری رہنے کی پیشن گوئی کی ہے۔ ڈویژنل کمشنر کشمیر بصیر احمد خان نے کہا ’وادی میں اگلے تین دنوں کے دوران بھاری بارش اور برف باری کی پیشن گوئی کی گئی ہے‘۔ انہوں نے بتایا ’اس کے پیش نظر وادی کے تمام اضلاع کے ڈپٹی کمشنروں کو ضروری اقدامات اٹھانے کے لئے کہا گیا ہے‘۔ دریں اثنا ڈپٹی کمشنر کپواڑہ نے ضلع کے بالائی علاقوں میں 28 جنوری تک برفانی تودے گرآنے کی وارننگ جاری کردی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز