بابری مسجد تنازع : شری شری کی خالد رشید فرنگی محلی سے ملاقات ، مولانا نے کہا : لیکن اب بات چیت کا کیا فائدہ

Nov 17, 2017 01:10 PM IST | Updated on: Nov 17, 2017 03:05 PM IST

لکھنؤ: اجودھیا کا معاملہ بات چیت سے حل کرنے کی پہل پر سادھو سنتوں اور فریقین سے ملاقات کے بعد روحانی گرو شری روی شنکر نے آج آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے رکن مولانا خالد رشید فرنگی محلی سے ملاقات کی۔ مسٹر شری روی شنکر سے ملاقات کرنے کے بعد مولانا فرنگی نے کہاکہ ہم دونوں کی ملاقات کافی اچھی رہی۔ دونوں ہی چاہتے ہیں کہ ملک میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی قائم رہے ، لیکن معاملہ سپریم کورٹ میں ہے۔ اس کی سماعت پانچ دسمبر سے روزانہ ہونی ہے۔ لہذا اب بات چیت کا کیا مطلب۔ سپریم کورٹ ہی اس کا فیصلہ کرے گی اور وہی تمام کو قبول ہوگا۔

مسٹر شری روی شنکر نے کل اجودھیا میں شری رام جنم بھومی نیاس کے صدر مہنت نرتیہ گوپال داس کے ساتھ ساتھ کئی سادھو سنتوں اور معاملہ سے وابستہ فریقین سے ملاقات کی تھی۔ ان کی مہم کی وشو ہندو پریشد (وی ایچ پی) اور فریق سنی سنٹرل وقف بورڈ نے مخالفت کرکے ان کے مقصد پر پانی پھیر دیا تھا۔ وی ایچ پی سے وابستہ سنت اور نیاس رکن ڈاکٹر رام ولاس داس ویدانتی نے کہہ دیا تھا کہ شری روی شنکر اجودھیا معاملے کے لئے حل کے لئے نہیں بلکہ اپنے مفاد میں یہاں آئے تھے۔

بابری مسجد تنازع : شری شری کی خالد رشید فرنگی محلی سے ملاقات ، مولانا نے کہا : لیکن اب بات چیت کا کیا فائدہ

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز