جموں و کشمیر : سیکورٹی فورسز کی فائرنگ میں 22 سالہ نصیر احمد کی موت، باندی پورہ میں حالات پھر کشیدہ

Jun 16, 2017 12:34 PM IST | Updated on: Jun 16, 2017 12:34 PM IST

سرینگر: جموں و کشمیر کے دارالحکومت سری نگر میں پرانے ائرپورٹ روڈ پر کل شام مبینہ طور پر سیکورٹی فورسز کی فائرنگ میں زخمی ایک نوجوان کی آج صبح ہسپتال میں موت ہوگئی۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ پرانے ائرپورٹ روڈ پر رینگریتھ کے قریب کچھ مظاہرین نے سیکورٹی فورسز کی گاڑی پر پتھراؤ کیاتھا ۔

پتھراو کے جواب میں سیکورٹی فورسز نے مظاہرین کو کھدیڑنے کیلئے فائرنگ کی، جس میں ایک 22 سالہ نوجوان زخمی ہو گیا۔ زخمی نوجوان کو سرینگر واقع شیر کشمیر انسٹیٹیوٹ میں داخل کرایا گیا، جہاں صبح اس نے دم توڑ دیا۔ متوفی کی شناخت شمالی کشمیر میں ضلع باندي پورا کے اشتانگو کے نصیر احمد کی شکل میں کی گئی ہے۔

جموں و کشمیر : سیکورٹی فورسز کی فائرنگ میں 22 سالہ نصیر احمد کی موت، باندی پورہ میں حالات پھر کشیدہ

file photo

فائرنگ کے مختلف واقعات میں دو پولیس اہلکار شہید

ادھر وادی کشمیر میں گذشتہ 24 گھنٹوں کے دوران فائرنگ کے چار مختلف واقعات میں دو پولیس اہلکار اور ایک عام نوجوان ہلاک جبکہ ایک خاتون اور ایک پولیس اہلکار زخمی ہوگئے ہیں۔ گرمائی دارالحکومت سری نگر کے مضافاتی علاقہ حیدرپورہ میں گذشتہ رات اس وقت ایک پولیس اہلکار ہلاک جبکہ دوسرا شدید زخمی ہوگیا جب جنگجوؤں نے پولیس کی ایک پارٹی پر حملہ کردیا۔

ذرائع نے بتایا کہ جنگجوؤں نے گذشتہ رات قریب پونے نو بجے حیدرپورہ میں جموں وکشمیر بینک شاخ کے نذدیک پولیس کی ایک پارٹی پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں دو پولیس اہلکار شدید زخمی ہوگئے۔ انہوں نے بتایا کہ اگرچہ دونوں پولیس اہلکاروں کو فوری طور پر سری نگر کے فوجی اسپتال منتقل کیا گیا، تاہم شہزاد احمد صوفی نامی پولیس اہلکار زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ گیا۔ زخمی پولیس اہلکار منظور احمد کی حالت بھی تشویشناک بتائی جارہی ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز