بلقیس بانو کیس : ممبئی ہائی کورٹ کے فیصلہ کے خلاف ڈاکٹروں اور پولیس افسروں کی عرضیاں مسترد

Jul 10, 2017 09:54 PM IST | Updated on: Jul 10, 2017 09:54 PM IST

نئی دہلی : ممبئی ہائی کورٹ کے فیصلہ کو صحیح قرار دیتے ہوئے سپریم کورٹ نے بلقیس بانو آبروریزی معاملہ کی سماعت کے دوران جانچ میں رکاوٹ ڈالنے اور ثبوت چھپانے کے مجرم قراردئے گئے پولیس افسر آرایس بھگورا، چار دیگر پولیس افسران اور دو ڈاکٹروں کی عرضیاں مسترد کر دی ہیں۔ عدالت نے کہا کہ سب کی سزا برقرار رہے گی۔

عدالت عظمی نے دونوں ڈاکٹروں سے کہا کہ آپ نے ڈاکٹر ہونے کے باوجود پولیس کے کہنے پر رپورٹ لکھی، یہ آپ نے اپنے پیشے کے ساتھ انصاف نہیں کیا۔ خیال رہے کہ بھگورا کو نچلی عدالت نے بری کر دیا تھا، لیکن ہائی کورٹ نے اسے مجرم قرار دیا تھا۔ بھگورا نے ہائی کورٹ کے فیصلے پر روک لگانے کی مانگ کی تھی۔

بلقیس بانو کیس : ممبئی ہائی کورٹ کے فیصلہ کے خلاف ڈاکٹروں اور پولیس افسروں کی عرضیاں مسترد

واضح رہے کہ احمد آباد سے 250 کلومیٹر دور دیوگڑھ -باریا گاؤں میں 3 مارچ 2002کو 19 سالہ بلقیس بانو کی اجتماعی آبروریزی کی گئی تھی، اس وقت وہ پانچ ماہ کی حاملہ تھی۔ فسادات کے دوران گاؤں پر حملے میں اس کے خاندان کے 14 افراد کو قتل کر دیا گیا تھا جس میں تین دن کے بچے بھی شامل تھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز