بی جے پی نے حکومت بنائی تو ان کے ہاتھ میں ہو سکتی ہے اتر پردیش کی کمان

Mar 11, 2017 09:08 AM IST | Updated on: Mar 11, 2017 09:08 AM IST

لکھنئو۔ اتر پردیش انتخابات کے نتائج پر تمام سروے سامنے آ چکے ہیں اور تقریبا تمام میں بی جے پی کو برتری میں دکھایا گیا ہے۔ متعدد سروے میں بی جے پی کو مکمل اکثریت کی طرف بڑھتے ہوئے بتایا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ہی اب بی جے پی میں اس بات پر بھی بحث شروع ہو گئی ہے کہ اگر بی جے پی واقعی حکومت بناتی ہے تو وزیر اعلی کی کرسی پر کون بیٹھے گا؟

واضح اکثریت کی بنیاد پر دیکھا جائے تو تینوں اہم جماعتوں کی جانب سے وزیر اعلی کے عہدے کے دعویدار طے ہیں۔ ایس پی اور بی ایس پی کے پاس جہاں مایاوتی اور اکھلیش کا چہرہ ہے تو وہیں بی جے پی میں اس مسئلے پر سخت مقابلہ ہے۔ اتر پردیش کے ممکنہ وزیر اعلی کے طور پر زیادہ تر لوگ مرکزی وزیر داخلہ اور لکھنؤ کے ایم پی راج ناتھ سنگھ کے نام پر شرط لگانے کو تیار ہوں گے۔

بی جے پی نے حکومت بنائی تو ان کے ہاتھ میں ہو سکتی ہے اتر پردیش کی کمان

راج ناتھ سنگھ صوبے میں بی جے پی کے سب سے قدآور لیڈر ہیں۔ انہوں نے مارچ 2002 میں وزیر اعلی کا عہدہ چھوڑ دیا تھا۔ اس کے بعد انہوں نے اپنا قدم قومی سیاست کی جانب بڑھایا۔ وہ پہلے مرکزی وزیر بنے پھر دو بار بی جے پی کے قومی صدر رہے۔ بطور اسٹار کمپینر راج ناتھ سنگھ اسمبلی انتخابات کے دوران 26 دنوں تک صوبے میں ڈٹے رہے۔ اس دوران انہوں نے 120 عوامی جلسوں سے خطاب کیا۔

انتخابی مہم کے دوران راج ناتھ سنگھ نے 20 ہزار کلومیٹر کی یاترا بھی کی۔ ان کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ تنظیم کے کافی نظم و ضبط سپاہی ہیں، جو ہمیشہ سے پارٹی کے فیصلوں کے ساتھ آگے بڑھنے کے لئے جانے جاتے ہیں۔ بی جے پی کی طرف سے وزیر اعلی کا چہرہ وزیر مواصلات منوج سنہا بھی ہو سکتے ہیں۔ وزیر اعلی کی دوڑ میں راج ناتھ سنگھ کے بعد جس دوسرے مرکزی وزیر کا نام آتا ہے وہ وزیر مواصلات منوج سنہا ہیں۔

آئی آئی ٹی بی ایچ یو سے سول انجینئرنگ میں بی ٹیک اور ایم ٹیک کی ڈگری حاصل کرنے والے منوج سنہا نے اپنے کام سے بطور تنظیمی پالیسی ساز کا درجہ حاصل کیا ہے۔ اس کے لئے انہوں نے وزیر اعظم نریندر مودی اور بی جے پی صدر امت شاہ کا اعتماد بھی جیت لیا ہے۔ سب اس بات کو جانتے ہیں کہ انہیں یوپی کی ہر ایک اسمبلی سیٹ کی معلومات ہے۔ اتنا ہی نہیں وہ وزیر اعظم کی ہائی پروفائل سیٹ وارانسی کا ذمہ بھی سنبھالے ہوئے ہیں۔ وہ ایک مضبوط پارٹی کارکن ہیں جو ہمیشہ لو-پروفائل میں رہنا پسند کرتے ہیں۔

بی جے پی کے ریاستی صدر کیشو پرساد موریا ریاست کے او بی سی طبقہ کی نمائندگی کرتے ہیں۔ وزیر اعلی کی دوڑ میں پھول پور سے پہلی بار منتخب ہوئے رکن پارلیمنٹ اور پارٹی کے ریاستی صدر کیشو پرساد موریہ کا بھی نام شامل ہے۔ کیشو پرساد موریہ نے راج ناتھ سنگھ اور منوج سنہا کے مقابلے کم عوامی جلسوں سے خطاب کیا ہے، کیونکہ وہ پردے کے پیچھے رہ کر تنظیمی ذمہ داریوں کو نبھانے میں لگے تھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز