ڈاکٹر منموہن سنگھ اور پی چدمبرم نے ضابطہ کو نظر انداز کرکے مالیہ کی مدد کی تھی : بی جے پی

وجے مالیہ کو بار بار ضابطہ کو نظر انداز کرکے اقتصادی مدد دینے میں سابق وزیر اعظم من موہن سنگھ اور ان کی حکومت کے وزیر داخلہ پی چدمبرم کا براہ راست ہاتھ ہونے کا الزام لگاتے ہوئے آج کانگریس صدر سونیا گاندھی اور نائب صدر راہل گاندھی سے سوال کیا کہ اس معاملے میں ان کا کیا رول ہے

Jan 30, 2017 04:25 PM IST | Updated on: Jan 30, 2017 04:25 PM IST

نئی دہلی : بھارتیہ جنتا پارٹی نے کنگ فشر ایر لائنس کے مالک وجے مالیہ کو بار بار ضابطہ کو نظر انداز کرکے اقتصادی مدد دینے میں سابق وزیر اعظم من موہن سنگھ اور ان کی حکومت کے وزیر داخلہ پی چدمبرم کا براہ راست ہاتھ ہونے کا الزام لگاتے ہوئے آج کانگریس صدر سونیا گاندھی اور نائب صدر راہل گاندھی سے سوال کیا کہ اس معاملے میں ان کا کیا رول ہے۔

بی جے پی کے ترجمان سمبت پاترا نے یہاں ایک پریس کانفرنس میں وجے مالیہ کے ذریعہ ڈاکٹر من موہنس نگھ کو لکھے گئے دو خط اور مسٹر چدمبرم اور کمپنی کے چیف فائنانشیل افسر روی کو لکھے گئے ایک خط کی نقل بھی پیش کی۔ ڈاکٹر پاترا نے کہا کہ اب تک پوچھا جاتا تھا کہ مالیہ کو بینکوں سے قرض دلانے کے پیچھے کون سے ہاتھ تھے ،لیکن اب واضح ہوگیا ہے کہ وہ ہاتھ ڈاکٹر منموہن سنگھ اور مسٹر پی چدمبرم کے تھے۔

ڈاکٹر منموہن سنگھ اور پی چدمبرم نے ضابطہ کو نظر انداز کرکے مالیہ کی مدد کی تھی : بی جے پی

انہوں نے سابق وزیر اعظم کے میڈیا مشیر رہ چکے سنجے بارو کی کتاب کے اس بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہ اکہ وزیر اعظم دفتر کی تمام فائلیں مسٹر چٹرجی کے ہاتھوں 10جن پتھ کی منظوری کے لئے جاتی تھیں ۔ انہوں نے کہا کہ ڈاکٹر سنگھ ، مسٹر چدمبرم ، محترمہ سونیا گاندھی اور مسٹر راہل گاندھی کو جواب دینا چاہئے کہ مالیہ کو اتنی زیادہ مدد دینے میں ان کا کیا رول تھا۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز