راجیہ سھا الیکشن : احمد پٹیل کی جیت کو عدالت میں چیلنج کرنے کی بی جے پی کی تیاری تیز ، وکلا سے صلاح و مشورہ جاری

Aug 11, 2017 06:15 PM IST | Updated on: Aug 11, 2017 06:15 PM IST

نئی دہلی: کانگریس کی صدر سونیا گاندھی کے سیاسی سیکرٹری احمد پٹیل اگرچہ راجیہ سبھا الیکشن جیت گئے لیکن بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے شکست خوردہ امیدوار بلونت سنگھ انتخابات کے نتائج کو جلد ہی عدالت میں چیلنج کرنے جا رہے ہیں۔

پارٹی ذرائع نے الزام لگایاہے کہ الیکشن کمیشن نے اس معاملے میں اپنے فیصلے میں تمام حقائق کا دھیان نہیں رکھا اور بیلٹ باکس میں ڈالے جا چکے ووٹ واپس نکال کر منسوخ کئے گئےجو پولنگ سے متعلق قوانین کے مطابق نہیں ہے۔ بی جے پی کے مطابق صبح نو بج کر 13 منٹ اور نو بج کر 15 منٹ پر ڈالے جانیوالے ووٹوں پر الیکشن افسر، سپروائزر اور کانگریس پارٹی نے شام تک ذرا بھی اعتراض نہیں کیا. یہاں تک کہ ووٹنگ ختم ہونے کے بعد کل ووٹوں کی تعداد سے متعلق کاغذات بھی قبول کر لئے گئےلیکن شکست کا احساس ہونے پر شور مچانا شروع کر دیاگیا۔

راجیہ سھا الیکشن : احمد پٹیل کی جیت کو عدالت میں چیلنج کرنے کی بی جے پی کی تیاری تیز ، وکلا سے صلاح و مشورہ جاری

کانگریس راجیہ سبھا رکن احمد پٹیل: فائل فوٹو، گیٹی امیجیز۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ انتخابی ضابطہ 1961 کے دستور العمل میں شق 39 کے مطابق کسی کے ووٹ کو غیر مجاز شخص کو ظاہر جیسی بے ضابطگی پر الیکشن افسر، سپروائزر اعتراض کرتے ہیں۔ اگر ووٹ باکس میں ڈال دیا گیا ہے اور کسی نے پولنگ کے گھنٹوں بعد تک اعتراض نہیں کیا۔ کانگریس کی طرف سے پولنگ ختم ہونے کے بعد متعلقہ دستاویزات کوبھی قبول کر لیا گیا۔ کمیشن نے ان حقائق پر توجہ دیئے بغیر ہی صرف ويڈيو فوٹیج کو دیکھ کر فیصلہ سنا دیا۔

ذرائع کے مطابق مسٹر بلونت سنگھ راجپوت آپ وکلاء سے مشورہ کر رہے ہیں اور جلد ہی الیکشن کمیشن کے فیصلے کو عدالت میں چیلنج کریں گے۔ حالانکہ انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ کب اور کہاں عرضی دائر کی جائے گی۔ ذرائع نے کہا کہ اگر چہ مسٹر احمد پٹیل الیکشن جیت گئے لیکن انتخابات کے نتائج کا سیاسی فائدہ بی جے پی کو مل گیا ہے۔مسٹر پٹیل کے پاس 61 ممبران اسمبلی تھے اور وہ 44 ممبران اسمبلی کو ہی بچانے میں لگے رہے اور 17 ایم ایل اے گنوا بیٹھے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز