اترپردیش میں بی ایس پی لیڈر محمد سمیع کا گولی مار کر قتل ، بی جے پی لیڈر کے خلاف کیس درج

Mar 20, 2017 09:30 AM IST | Updated on: Mar 20, 2017 09:30 AM IST

الہ آباد : اترپردیش میں الہ آباد کے مئوامہ تھانہ علاقہ میں انتخابی رنجش کی وجہ سے بہوجن سماج پارٹی (بی ایس پی) کے لیڈر اور سابق بلاک سربراہ محمد سمیع کو حملہ آوروں نے گولیوں سے چھلنی کر کے موت کے گھاٹ اتار دیا ۔

دلچسپ بات یہ ہے کہ پولیس تھانہ کے نزدیک ہی اتوار کو پانچ مرتبہ بلاک کے  سربراہ رہ چکے محمد سمیع پر تابڑ توڑ فائرنگ کر کے قتل کر دیا گیا ۔ بی ایس پی لیڈر کو ان کے آفس کے باہر ہی کئی گولیاں ماری گئیں ۔ گولی مارنے کے بعد حملہ آور فرار ہو گئے۔

اترپردیش میں بی ایس پی لیڈر محمد سمیع کا گولی مار کر قتل ، بی جے پی لیڈر کے خلاف کیس درج

اس واقعہ کے بعد سمیع کے اہل خانہ نے بی جے پی لیڈر اور موجودہ بلاک سرابرہ سمیت چار افراد کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کروایا ہے ۔ اہل خانہ کا الزام ہے کہ انتخابی رنجش کی وجہ سے بی جے پی لیڈر نے ساتھیوں کے ساتھ مل کر اس واقعہ کو انجام دیا ہے۔

پولیس نے اہل خانہ کی تحریر پر بی جے پی لیڈر کے خلاف کیس درج کر کے معاملے کی تحقیقات شروع کر دی ہے ۔ ادھر کنڈا اور الہ آباد سے اسمبلی انتخابات لڑ چکے محمد سمیع کے قتل کی خبر پھیلتے ہی موقع پر ان کے حامیوں کی بھیڑ جمع ہو گئی اور انہوں نے ہنگامہ کرتے ہوئے الہ آباد پرتاپ گڑھ روڈ جام کر دیا۔

اس کے بعد کئی پولیس تھانوں کی فورس کے ساتھ موقع پر پہنچے اعلی افسران نے لوگوں کو سمجھا بجھا کرجام ختم کروایا ۔ جائے حادثہ پر پہنچے بی ایس پی لیڈروں نے واقعہ کی شدید مذمت کرتے ہوئے ریاست میں لا اینڈ آرڈر پر ابھی سے سوال کھڑے کرنے شروع کر دیئے ہیں ۔ ان لوگوں نے کہا کہ اس طرح کا واقعہ معاشرے کے لئے مہلک ہے ۔ آج ہی وزیر اعلی حلف لیتے ہیں اور اس طرح کا ایک واقعہ پیش آجاتا ہے ۔

ری کمنڈیڈ اسٹوریز