کشمیر : گھر میں گھس کر دہشت گردوں نے اغوا کیا پھر لیفٹیننٹ عمر فیاض کو ماری گولی، فوج نے بزدلانہ حرکت قرار دیا

صبح لوگوں نے لاش دیکھی تو پولیس کو اطلاع دی ۔ پولیس کے آنے کے بعد ان کی لاش اٹھائی گئی ۔ ابھی پوسٹ مارٹم نہیں ہوا ہے ۔

May 10, 2017 09:32 AM IST | Updated on: May 10, 2017 01:33 PM IST

سری نگر : کشمیر میں فوج کے ایک لیفٹیننٹ کی گولیوں سے چھلنی لاش برآمد ہوئی ہے۔ لاش جنوبی کشمیر کے شوپیاں میں برآمد ہوئی ہے۔ عمر فیاض کو دہشت گردوں نے گولی مار کر جاں بحق کر دیا ۔ بی جے پی کےسکریٹری جنرل نے واقعہ کی سخت تنقید کی ہے۔ فوج نے بھی بیان جاری کر کے شہید کو سلام پیش کیا ہے۔

لیفٹیننٹ کی شناخت عمر فیاض کے طور پر کی گئی ہے۔ ان کی عمر 23 سال ہے۔ وہ کلگام کے ہیں۔ نیوز 18 انڈیا کے مطابق فیاض راجپوتانہ رائفل میں تھے۔ ان کی پوسٹنگ اخنور سیکٹر میں تھی۔ وہ دسمبر 2016 میں کمیشنڈ ہوئے تھے۔ اطلاعات کے مطابق عمر فیاض کلگام میں نوجوانوں کیلئے ایک مثال تھے۔

کشمیر : گھر میں گھس کر دہشت گردوں نے اغوا کیا پھر لیفٹیننٹ عمر فیاض کو ماری گولی، فوج نے بزدلانہ حرکت قرار دیا

سابق وزیر اعلی عمر عبداللہ نے بھی واقعہ کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے تشویش کا اظہار کیا ہے۔ انہوں نے صبح ٹویٹ کر کے فیاض کے گھر والوں کے تئیں تعزیت کا اظہار کیا۔

بتایا جا رہا ہے کہ فیاض ایک شادی کی تقریب میں شامل ہونے کیلئے آئے تھے۔ انہیں منگل کی رات گھر سے اغوا کر لیا گیا تھا۔ بعد میں ان کی لاش گھر سے 30 کلومیٹر دور چوک پر پھینک دی گئی ۔ اغوا کرنے والے دہشت گردوں کی تعداد پانچ بتائی جا رہی ہے۔ ان کے جسم پر دو گولیوں کے نشان ملے ہیں۔ مانا جا رہا ہے کہ کشمیری نوجوانوں کو مرکزی دھارے میں آنے سے روکنے کے لئے اس قتل کو انجام دیا گیاہے۔ صبح لوگوں نے لاش دیکھی ،تو پولیس کو اطلاع دی۔ خبر ملتے ہی پولیس وہاں پہنچی اور شناخت کے لئے لاش کو لے گئی۔ پولیس نے کیس درج کرکے تفتیش شروع کردی ہے۔ فی الحال کسی جنگجو تنظیم نے اس ہلاکت کی ذمہ داری نہیں لی ہے۔

دریں اثنا وزارت دفاع کے ترجمان کرنل راجیش کالیا نے فوجی افسر کے قتل کو بزدلانہ حرکت قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نامعلوم جنگجوؤں نے غیرمسلح فوجی افسر کو اغوا کرکے قتل کردیا۔ انہوں نے بتایا ’لیفٹیننٹ عمر اپنے خاندان میں ہونے والی ایک شادی کی تقریب میں شرکت کی غرض سے چھٹی پر آیا ہوا تھا‘۔ کرنل کالیا نے بتایا کہ مقتول نوجوان فوجی افسر جموں خطہ کے اکھنور میں تعینات تھا۔ انہوں نے بتایا ’فوج سوگوار کنبے سے تعزیت ظاہر کرتے ہوئے اس عزم کا اظہار کرتی ہے کہ اس گھناونے فعل کے مرتکبین کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے گا‘۔ خیال رہے کہ جنوبی کشمیر کے چار اضلاع شوپیان، کولگام، اننت ناگ اور پلوامہ میں گذشتہ چھ مہینوں کے دوران جنگجویانہ سرگرمیوں میں اضافہ دیکھا گیا۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز