مشہور شیعہ عالم دین مولانا کلب صادق نے آر اینڈ ڈبلیو سیکورٹی  لینے سے انکار کردیا

Jun 23, 2017 12:04 PM IST | Updated on: Jun 23, 2017 12:04 PM IST

لکھنو : مرکزی حکومت نے لیڈروں اور کچھ سابق وزراء کی سیکورٹی کا جائزہ لیا ہے ۔ اس کے بعد کچھ لیڈروں کی سیکورٹی کو کم کر دیا گیا ہے ۔ مسلم پرسنل لاء بورڈ کے اہم رکن اور معروف عالم دین مولانا سید کلب صادق کو آر اینڈ اے ڈبليو سیکورٹی کے تحت رکھا گیا ہے ۔ ذرائع کے مطابق مولانا سید کلب صادق نے سیکورٹی لینے سے انکار کر دیا ہے ۔

علاوہ ازیں تقریبا 42 لیڈروں کی سیکورٹی میں کمی کی گئی ہے ۔ وہیں کانگریس میں وائی پلس کیٹیگری کی سیکورٹی رکھنے سابق وزیر دفاع اے کے انٹونی ، اجے ماکن ، گجرات میں حزب اختلاف کے رہنما ارجن مودھواڈيا ، لوک سبھا ممبر پارلیمنٹ ششی تھرور ، سابق مرکزی وزیر شری پرکاش جیسوال کی سیکورٹی کو وائی کیٹیگری میں تبدیل کیا گیا ہے ۔

مشہور شیعہ عالم دین مولانا کلب صادق نے آر اینڈ ڈبلیو سیکورٹی  لینے سے انکار کردیا

خصوصی سیکورٹی گروپ (ایس پی جی)، نیشنل سیکورٹی گارڈ (این ایس جی)، انڈو- تبت بارڈر پولیس اور سی آر پی ایف وی وی آئی پی ، وی آئی پی ، کچھ مرکزی حکام ، مشہور شخصیات اور کھلاڑیوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لئے ذمہ دار ایجنسیاں ہیں ۔ سیکورٹی کیٹیگری تبدیل کرنے کا فیصلہ حال ہی میں لیا گیا تھا ، جب خفیہ ایجنسیوں نے تمام 42 افراد کی حفاظت کا تعین کیا تھا ۔ وی آئی پی کی حفاظت کی وقت وقت پر خفیہ ایجنسیوں اور دیگر سیکورٹی ایجنسیوں کی طرف سے جائزہ لیا جاتا ہے ۔ ان سفارشات کی بنیاد پر، سیکورٹی کیٹیگری کو اپ گریڈ کرنے یا کم کرنے کا فیصلہ کیا جاتا ہے ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز