ٹوجی فیصلہ پر کانگریس حکومت پر حملہ آور، ونود رائے سے معافی کا مطالبہ

نئی دہلی۔ مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی)کی پٹیالیہ ہاؤس واقع خصوصی عدالت کے ذریعہ آج 2 جی گھوٹالہ معاملے میں سبھی ملزمین کو بری کرنےکے فیصلے کے بعد کانگریس نے اس معاملے کو اٹھانے والے سابق آڈیٹر جنرل (سی اے جی) ونود رائے سے معافی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں سبھی موجودہ عہدوں سے استعفیٰ دینا چاہئے۔

Dec 21, 2017 01:28 PM IST | Updated on: Dec 21, 2017 01:28 PM IST

نئی دہلی۔ مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی)کی پٹیالیہ ہاؤس واقع خصوصی عدالت کے ذریعہ آج 2 جی گھوٹالہ معاملے میں سبھی ملزمین کو بری کرنےکے فیصلے کے بعد کانگریس نے اس معاملے کو اٹھانے والے سابق آڈیٹر جنرل (سی اے جی) ونود رائے سے معافی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں سبھی موجودہ عہدوں سے استعفیٰ دینا چاہئے۔ کانگریس کے سینئر لیڈر ویرپا موئلی نے عدالت کے فیصلے پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے آج یہاں پارلیمنٹ کے احاطے میں کہا ’سی اے جی کا الزام اندازو ں پر مبنی تھا ،اور اندازے عدالتی عمل میں ٹک نہیں سکتے‘۔ انہوں نے کہا کہ مسٹر رائے کو ملک سے معافی مانگنی چاہئے۔ساتھ ہی موجودہ حکومت نے جن عہدوں پر ان کی تقرری کی ہے انہیں سبھی سے استعفیٰ دے دینا چاہئے۔

مسٹر موئلی نے کہا کہ 2جی اسپیکٹرم میں بغیر بولی کے الاٹمنٹ کا فیصلہ سابقہ قومی جمہوری اتحادی حکومت (این ڈی اے)کا تھا۔ متحدہ ترقی پسند اتحاد(یو پی اے) کی من موہن حکومت نے تو بولی کی بنیاد پر الاٹمنٹ کرنے کا انتظام شروع کیا تھا۔ اس لئے ،اگر یہ جرم ہے تو اس کےلئے این ڈی اے حکومت کو قصوروار ٹھہرایا جانا چاہئے۔

ٹوجی فیصلہ پر کانگریس حکومت پر حملہ آور، ونود رائے سے معافی کا مطالبہ

ڈی ایم کے کی راجیہ سبھا رکن کنی موجھی: فائل فوٹو، پی ٹی آئی۔

انہوں نے میڈیا پر بھی طنز کرتے ہوئے کہا کہ میڈیا نے سی اے جی کی رپورٹ پر ہنگامہ کھڑا کیا اور بھارتیہ جنتا پارٹی نے اسے اتنا بڑا مسئلہ بنا دیا کہ مرکز میں اقتدار کی تبدیلی میں اس کا اہم رول رہا۔ کانگریس کے ششی تھرور نے کہا کہ عدالت کا فیصلہ قبول ہے اور اس سے ثابت ہوتا ہے کہ یوپی اے حکومت پر لگائے گئے الزامات غلط تھے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز