Live Results Assembly Elections 2018

نوٹ بندی کی برسی پر لٹیرے منا رہے ہیں اب 'لوٹ کا جشن': کانگریس

نئی دہلی۔ کانگریس نے نوٹ بندي کو ملک کا سب سے بڑا گھوٹالہ اور معیشت کی کمر توڑنے والا فیصلہ قرار دیتے ہوئے آج کہا کہ 'لٹیروں ' کو اس کی برسی پر 'لوٹ کا جشن' منانے کی بجائے یہ بتانا چاہئے کہ ان کے اس فیصلے سے ملک کو کیا حاصل ہوا؟

Nov 08, 2017 08:37 PM IST | Updated on: Nov 08, 2017 08:37 PM IST

نئی دہلی۔  کانگریس نے نوٹ بندي کو ملک کا سب سے بڑا گھوٹالہ اور معیشت کی کمر توڑنے والا فیصلہ قرار دیتے ہوئے آج کہا کہ 'لٹیروں ' کو اس کی برسی پر 'لوٹ کا جشن' منانے کی بجائے یہ بتانا چاہئے کہ ان کے اس فیصلے سے ملک کو کیا حاصل ہوا؟ کانگریس کے میڈیا انچارج رنديپ سنگھ سورجےوالا، ویمن کانگریس صدر سشمیتا دیو، سیوادل کے سربراہ منوہر جوشی، یوتھ کانگریس کے صدر امریندر سنگھ راجہ اور ترجمان جے ویر شیر گل نے یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں نوٹ بندي کے ایک سال مکمل ہونے پر منعقد ہ پریس کانفرنس میں کہا کہ ایک سال قبل وزیر اعظم نریندر مودی نے ملک میں نوٹ بندی کا جو فیصلہ کیا تھا ، اس سے ملک میں کاروباری تالا بندی، معاشی افراتفری اور منظم لوٹ ہوئی ، جبکہ بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈروں کو گھوٹالہ کرنے میں آسانی ہوئی ۔

انہوں نے الزام لگایا کہ نوٹ بندي کے فیصلے سے ٹھیک پہلے بی جے پی اور اس کے لیڈروں نے ملک کے مختلف حصوں میں سینکڑوں کروڑ روپے کی زمین خریدی اور کروڑوں روپے اپنے اکاؤنٹس میں جمع کرائے۔ صرف ایک مہینہ پہلے، تین لاکھ کروڑ روپے کی فکسڈ ڈپوزٹ کی گئی۔ کولکاتہ اور احمد آباد کے بینکوں میں پارٹی اور اس کے لیڈروں کے اکاؤنٹس میں کروڑوں روپے جمع کرائے گئے۔ یہ ایک بڑی ' لوٹ ' تھی لیکن کانگریس کی طرف سے اس کی تحقیقات کے بار بار مطالبے کے باوجود اس کی تحقیقات نہیں کرائی گئی۔ انہوں نے سوال کیا کہ یہ پیسہ کہاں سے آیا تھا ؟مسٹر سورجےوالا نے کہا کہ 'نہ کھاؤں گا نہ کھانے دوں گا' کی بات کرنے والے نوٹ بندي کے نام پر ملک کی معیشت اور لوگوں کا روزگار کھا گئے اور اب جشن منا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کے آنسو پونچھنے کی بجائے نوٹ بندي کی برسی پر 'لٹیرے' اب 'لوٹ کا جشن' منا رہے ہیں۔ نوٹ بندي سے ملک کی معیشت کو تین لاکھ کروڑ روپے سے زیادہ کا نقصان پہنچانے، منظم شعبے میں 15 لاکھ لوگوں اور غیر منظم شعبے میں 3.72 کروڑ لوگوں کی نوکریاں چھین لینے والے لوگ اپنے من مانے فیصلے پر غلطی ماننے اور افسوس کرنے کے بجائے جشن منا رہے ہیں۔

نوٹ بندی کی برسی پر لٹیرے منا رہے ہیں اب 'لوٹ کا جشن': کانگریس

کانگریس لیڈر رندیپ سنگھ سرجیوالا: فائل فوٹو

Loading...

کانگریس کے لیڈروں نے الزام لگایا کہ بی جے پی اور اس کی حکومت نے ایونٹ مینجمنٹ اور شہرت کے لئے ڈھونگ کرنے میں مہارت حاصل کرلی ہے۔ اسی رجحان کا نتیجہ ہے کہ نوٹ بندی کی برسی پر اس فیصلے کے منفی نتائج کا جائزہ لینے کی بجائے، اس کا جشن منایا جا رہا ہے اور اپنے غلط فیصلے کا بھی جشن منا کر اس کو درست ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ قابل ذکر ہے کہ بی جے پی آٹھ نومبر کی نوٹ بندی کو 'کالا دھن ورودھی دیوس' کے طورپر ، جبکہ کانگریس اور دیگر اپوزیشن پارٹیاں اس کو ' یوم سیاہ' کے طور پر منا رہی ہیں۔ اس موقع پر تمام کانگریسی لیڈروں نے اپنے ہاتھوں پر سیاہ بینڈ پہن کر پریس کانفرنس سے خطاب کیا۔ مسٹر سورجے والا نے کہا کہ مسٹر مودی نے بغیر سوچے سمجھے نوٹ بندی کا فیصلہ کیا تھا۔ ان کا یہ فیصلہ ملک کی معیشت پر کرارا جھٹکا تھا۔ نوٹ بندی کی وجہ سے ملک کی جی ڈی پی کی شرح دو فیصد کم ہوئي ہے اور ملک کی معیشت تباہ ہو گئی ہے۔ کاروبار ٹھپ ہوگئے ہيں ، روزگار کے مواقع ختم ہوگئے ہیں ، اور ملک کے لوگ مسلسل اس کے نتائج بھگت رہے ہیں۔ انہوں نے نوٹ بندی کو اقتدار کی ہوس میں کیا گيا بے لگام فیصلہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سلسلے میں کسی ماہر سے مشورہ نہیں لیا گیا۔

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز