ہتک عزت کیس : رام جیٹھ ملانی کے ایک لفظ سے چراغ پا ہوئے ارون جیٹلی ، شدید لفظی جنگ

May 17, 2017 11:11 PM IST | Updated on: May 17, 2017 11:12 PM IST

نئی دہلی : ڈی ڈی سی اے کیس میں بحث کے دوران مرکزی وزیر ارون جیٹلی اور سینئر وکیل رام جیٹھ ملانی کے درمیان بدھ کو دہلی ہائی کورٹ میں تیکھی بحث ہوئی۔ جیٹلی نے دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال کے وکیل رام جیٹھ ملانی کے ایک لفظ پر اعتراض کیا، اس کے بعد ان کا بیان درج نہیں کیا جا سکا۔ خیال رہے کہ ڈی ڈی سی اے کیس میں وزیر خزانہ جیٹلی نے کیجریوال اور عام آدمی پارٹی کے دیگر رہنماؤں پر 10 کروڑ روپے کا ہتک عزت کا کیس کر رکھا ہے۔

جرح کے دوران جوائنٹ رجسٹرار ديپالي شرما کے سامنے وزیر خزانہ نے جیٹھ ملانی سے پوچھا کہ کیا کیجریوال سے ہدایت لے کر ان کے خلاف اس لفظ کا استعمال کیا گیا۔ جیٹلی نے کہا کہ '' اگر ایسا ہے تو میں مدعا علیہ (کیجریوال) کے خلاف الزامات کو بڑھا دوں گا۔ '' انہوں نے کہا کہ ذاتی بدنیتی کی بھی ایک حد ہے۔

ہتک عزت کیس : رام جیٹھ ملانی کے ایک لفظ سے چراغ پا ہوئے ارون جیٹلی ، شدید لفظی جنگ

جیٹلی کے وکیل راجیو نائر اور سندیپ سیٹھی نے بھی کہا کہ جیٹھ ملانی ہتک آمیز سوال کر رہے ہیں۔ انہیں غیر متعلقہ سوال پوچھنے سے بچنا چاہئے، کیونکہ یہ معاملہ ارون جیٹلی بمقابلہ اروند کیجریوال ہے ، نہ کہ رام جیٹھ ملانی بمقابلہ ارون جیٹلی۔ اس پر جیٹھ ملانی نے کہا کہ انہوں نے اس لفظ کا استعمال کیجریوال کی ہدایت پر کیا ہے۔عام آدمی پارٹی کے لیڈروں کا دفاع کر رہے جیٹھ ملانی سمیت وکلاء کے ایک گروپ نے یہ بھی کہا کہ جیٹلی آپ مبینہ بدنامی کے لئے 10 کروڑ روپے کے دعوے کے حقدار نہیں ہیں۔

جیٹلی نے کیجریوال اور پانچ دیگر رہنماؤں راگھو چڈھا، کمار وشواس، آشوتوش، سنجے سنگھ اور دیپک واجپئی کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ دائر کرکے 10 کروڑ روپے کے معاوضہ کا مطالبہ کیا ہے۔ ان لیڈروں نے سال 2000 سے 2013 تک ڈی ڈی سی اے کا صدر رہنے کے دوران جیٹلی پر مالی بے ضابطگیاں کرنے کا الزام لگایا تھا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز