جامع مسجد دہلی کے امام کے نام سے شاہی لفظ ہٹانے کا مطالبہ ، دہلی ہائی کورٹ نے جاری کیا نوٹس

Nov 16, 2017 10:26 PM IST | Updated on: Nov 16, 2017 10:26 PM IST

نئی دہلی : دہلی کی جامع مسجد کے شاہی امام کے نام کے آگے شاہی لفظ پر خطرہ منڈلا رہا ہے ۔ دہلی ہائی کورٹ نے ایک عرضی پر سماعت کرتے ہوئے دہلی وقف بورڈ اور وزارت اقلیتی امور کو ایک نوٹس جاری کیا ہے۔ ہائی کورٹ میں شاہی امام کے نام کے آگے سے شاہی کا خطاب ہٹائے جانے کا مطالبہ کیا گیا ہے ۔

عرضی گزار کا کہنا ہے کہ آئین کے آرٹیکل 18 میں ہندوستانی شہریوں کو کسی بھی غیر ملکی ریاست سے خطاب حاصل کرنے پر روک لگائی گئی ہے ، صرف ایک شاہی لفظ کو چھوڑ کر ، اس کا استعمال مغل کے دور حکومت میں کیا جاتا تھا ۔

جامع مسجد دہلی کے امام کے نام سے شاہی لفظ ہٹانے کا مطالبہ ، دہلی ہائی کورٹ نے جاری کیا نوٹس

شاہی امام مولانا سید احمد بخاری : فائل فوٹو۔

عرضی گزار نے کہا ہے کہ ایک سچی جمہوریت میں بھید بھاو کیلئے کوئی جگہ نہیں ہے۔ پہلے ہندوستان میں رائے بہادر ، سوائی ، رائے صاحب ، زمیندار جیسے ٹائٹل مروج تھے ، جو آئین کے آرٹیکل 18 سے ختم ہوگئے ، ایسے میں اس لفظ کو بھی ہٹایا جانا چاہئے۔

اس سلسلہ میںنیوز 18ڈاٹ کام نے دہلی وقف بورڈ کے سابق سربراہ امانت اللہ خان سے بھی بات چیت کرنے کی کوشش کی ، مگر انہوں نے امام کے نام کے آگے سے شاہی ہٹانے کے معاملہ پر کچھ بھی بولنے سے انکار کردیا ۔ تاہم انہوں نے اتنا ضرور کہا کہ جامع مسجد شاہی ہے۔ اس معاملہ کی اگلی سماعت 27 فروری 208 کو ہوگی ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز