کیا نہرو جی نے اظہاررائے کی آزادی کو روکنے کی کوشش کی تھی ؟

Aug 16, 2017 10:08 AM IST | Updated on: Aug 16, 2017 10:08 AM IST

نئی دہلی : ملک میں اظہار رائے کی آزادی کو روکنے کی پہلی کوشش پہلے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے آئین کی پہلے ترمیم کے ذریعے کی تھی۔ یہ دعوی دینک جاگرن کے سینئر صحافی اننت وجے نے ساہتیہ اکیڈمی کی طرف سے 'میری نظر میں آزادی کا مطلب' موضوع پر منعقد سیمینار میں کیا۔ آزادی کی 70 ویں سالگرہ کے موقع پر منعقد اس سیمینار میں ساہتیہ اکادمی ایوارڈ سے سرفراز انگریزی کے مشہور شاعر كےكي دارووالا، بھارتیہ گیان پيٹھ کے ڈائریکٹر لیلا دھر منڈلوي، سینئر شاعر پریاگ شکل، مشہور قصہ گو چترا مدگل، سنگیت ناٹک اکیڈمی ایوارڈ سے نوازے گئے ممتاز ڈرامہ نگار اصغر وجاہت ، دلت مصنف شرن کمار لمبالے وغیرہ نے شرکت کی۔

ٹی وی صحافت سے منسلک رہے شری وجے نے کہا کہ پنڈت نہرو جب وزیر اعظم تھے تو دو رسائل آرگنائجر اور کراس روڈ ان پر بہت زیادہ تنقیدکرتی تھی تو ان کے خلاف مقدمہ سپریم کورٹ تک گیا اور نہرو جی نے 10 مئی 1951 کو پہلی آئینی ترمیم پیش کی جو اظہاررائے پر کچھ بندشیں لگانے سے منسلک تھیں۔ اس کی مخالفت محض ایک شخص شیاما پرساد مکرجی نے کی تھی لیکن اس بات کے لئے مسٹر مکھرجی کو کبھی یاد نہیں کیا گیا اور اس بات کو دبا دیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ آزادی کے بعد ملک میں اظہار رائے کی آزادی پر روک لگانے کی چار بڑی کوششیں ہوئیں اور یہ کام کانگریس نے کیا۔ دوسری کوشش اندرا گاندھی نے ایمرجنسی میں کی، تیسری کوشش راجیو گاندھی نے پریس بل کے طور پر کی پر وہ ناکام رہے، چوتھی کوشش منموہن سنگھ نے کیبل ٹی وی بل کے طور پر کیا جس میں ایک ایس ڈی ایم کسی ٹی وی چینل کو بند کرا سکتا تھا۔ ملک کے دانشور طبقے نے 70 سال میں ان سوالات کو نہیں اٹھایا اور ایوارڈ نہیں لوٹائے لیکن آج وہ لوگ ایمرجنسی جیسی صورتحال ہونے کی بات ضرور کہتے ہیں۔

کیا نہرو جی نے اظہاررائے کی آزادی کو روکنے کی کوشش کی تھی ؟

سماج وکاس ادھین کیندر کے فیلو اورمعتبر صحافی ابھے کمار دوبے نے کہا کہ آج آزادانہ فکر بہت خطرناک کام ہے۔ انہوں نے کہا، "آپ جیسے ہی کسی ایک نظریے اور کسی ایک ایشو پر سوال کھڑے کرتے ہیں، ان کے حامی آپ پر حملے کرنا شروع کر دیتے ہیں، لہذا آزادی کا مطلب میرے لئے پریشانی پیدا کرتا ہے۔" ساہتیہ اکادمی کے سکریٹری کے سرینواس راؤ نے کہا کہ آزادی کا مطلب بہت وسیع اور پیچیدہ بھی ہے، کئی بار آزادی معاشرے کے اصول وقوانین کی بھی خلاف ورزی کرتی ہے، فلسفیانہ معنوں میں آزادی کا مطلب آزادی نروان اور نجات سے دنیاوی جھنجھٹوں سے نجات بھی ہے ۔ سیمینار میں یہ بھی کہا گیا کہ آزادی کئی بار افراتفری میں تبدیل ہو جاتی ہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز