نجمہ ہپت اللہ کا جامعہ کے طلبہ کو مشورہ ، زندگی کو بامقصد بنالیا جائے تو آسمان کی بلندیوں کوچھونا بھی ممکن

Aug 09, 2017 05:04 PM IST | Updated on: Aug 09, 2017 05:04 PM IST

نئی دہلی: جامعہ ملیہ اسلامیہ کی چانسلر اور منی پور کی گورنر ڈاکٹر نجمہ ہپت اللہ نے طلبہ کو مشورہ دیا کہ انہیں بلند سے بلندتر ین عزم کا حامل ہونا چاہئے اور اگر زندگی کو بامقصد بنالیا جائے تو آسمان کی بلندیوں کوچھونا بھی ناممکن نہیں ۔ ڈاکٹر ہپت اللہ آج یہاں جامعہ ملیہ اسلامیہ کے ریزیڈینشیل کوچنگ اکیڈمی کے ذریعہ سول سروس میں کامیاب ہونے والے امیدواروں کے لئے منعقد تہنیتی اجلاس سے خطاب کررہی تھی۔انہوں نے ڈاکٹر اقبال کے متعدد اشعار کے ذریعہ طلبہ اور نوجوانوں کو خوداعتمادی‘ بلند پروازی اورخودی کا پیغام بھی دیا۔ انہوں نے کہا کہ ’آپ کو جگنو کی طرح ہونا چاہئے جو خود بھی روشن ہو اور دوسروں کے راستے کو بھی روشن کرے ۔‘

انہوں نے سول سروس میں کامیاب امیدواروں کو مبارک باد دیتے ہوئے مشورہ دیا کہ وہ اپنے عمل کو اپنے ایمان کی ترازو پر تولتے رہیں اور اقبال کا یہ شعر بطور خاص پیش کیا: اے طائرلاہوتی اس رزق سے موت اچھی‘ جس رزق سے آتی ہو پرواز میں کوتاہی۔ جامعہ ملیہ کی چانسلر ڈاکٹر نجمہ ہپت اللہ نے اس نیشنل یونیورسٹی سے اپنے قلبی تعلق کا تفصیلی ذکرکیا اور بتایا کہ و ہ جب طالبہ تھیں تو جامعہ میں داخلہ لینا چاہتی تھیں لیکن بھوپال میں دوری کی وجہ سے ان کے والد نے داخلہ لینے کی اجازت نہیں دی ۔تاہم جامعہ سے تعلق کی بنا پر ہی انہوں نے اس کا چانسلر بننا اپنے لئے اعزاز سمجھا ۔ انہوں نے کہا کہ لڑکیوں کی تعلیم کے حوالے سے پہلے کے مقابلے آج انقلابی تبدیلی آئی ہے۔

نجمہ ہپت اللہ کا جامعہ کے طلبہ کو مشورہ ، زندگی کو بامقصد بنالیا جائے تو آسمان کی بلندیوں کوچھونا بھی ممکن

انہوں نے بتایا کہ ان کے والدنے انہیں امریکہ کے ناسا میں ملازمت کرنے کی اجازت نہیں دی تھی لیکن آج ان کی دو بیٹیاں امریکہ میں رہتی ہیں۔انہوں نے تعلیمی میدان میں جامعہ ملیہ کی حصولیابیوں کے لئے اس کے ذمہ داروں کو مبارک باد دی اور بتایا کہ اگلے ہفتے ہی وہ یہاں آنے والے ایک امریکی یونیورسٹی کے وفد کے ساتھ جامعہ کے تعلیمی معیار کو بہتر بنانے کے سلسلے میں صلاح و مشورہ کریں گی۔

جامعہ ملیہ کے وائس چانسلر نے سول سروس امتحان میں کامیاب ہونے والے امیدواروں کو مبارک باد دیتے ہوئے بتایا کہ جامعہ کے اس کوچنگ سینٹر کو مزید بہتر بنانے کے لئے مسلسل اقدامات کئے جارہے ہیں ۔ انہوں نے بتایاکہ جامعہ سول سروس کے بعد اب ریلوے سروس‘ انجینئرنگ سروسز اور جوڈیشیری سروسز میں ملازمت کے خواہش مند امیدواروں کے لئے بھی کوچنگ پروگرام شروع کرنے پر غور کررہا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اقلیتی امور کی وزارت نے جامعہ ملیہ میں لڑکیوں کے ہاسٹل کی تعمیر کے لئے مالی مدد دینے پر رضامندی ظاہرکردی ہے۔

پروفیسر طلعت احمد نے مزید بتایا کہ جامعہ ملیہ اسلامیہ نے منی پور میں بھی جلد ہی ایک کوچنگ سینٹر قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس سے شمال مشرق کے طلبہ کو کافی سہولت ہوجائے گی۔ اس موقع پر کوچنگ اکیڈمی کے ڈائریکٹر محمدطارق کے علاوہ سول سروسز کے لئے منتخب کئی امیدواروں نے بھی اپنے خیالات کااظہار کیا۔ اس موقع پرسول سروسز کے لئے منتخب امیدواروں کو مومنٹو سے نوازا گیا ان میں ظفراقبال‘ عارف احسن‘ بسمہ قاضی‘ سہیل قاسم میر‘ انابت خالق‘ پوجا کماری‘ اعجاز احمد’ کلدیپ سنگھ گناوت‘ رینا جمیل‘ ویبھو واسو واگھمارے‘ ویر سنگھ نینا‘ نکھل سریواس‘ سنگیتا مینا’ نکل سریواس‘ ابھیشک جوگاوت‘ بشری انصاری‘ ہرشت ورما او ربرہان حسین شامل تھے۔ خیال رہے کہ اس سال جامعہ ملیہ اسلامیہ کے ریزیڈینشیل کوچنگ سینٹر کے ذریعہ کوچنگ حاصل کرنے والوں میں 27امیدوار کامیاب ہوئے ہیں۔ وائس چانسلر طلعت احمد نے کہا کہ انہیں امید ہے کہ آنے والے برسوں میں یہاں سے کامیاب ہونے والے امیدواروں کی تعداد پچاس سے زیادہ ہوجائے گی۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز