ایکسکلوزیو : ملک میں دھڑلے سے چل رہا ہے فرضی پاسپورٹ کا کاروبار

Apr 10, 2017 11:57 PM IST | Updated on: Apr 10, 2017 11:57 PM IST

نئی دہلی : دنیا بھر میں ایسے تمام لوگ گھوم رہے ہیں ، جو دستاویزات کے مطابق تو ہندوستانی ہیں لیکن اصل میں نہیں ہیں ۔ جی ہاں یہ سب وہی لوگ ہیں ، جن کے پاس فرضی ہندوستانی پاسپورٹ موجود ہے ۔ نیوز 18 انڈیا نے ایسے ہی بڑے جعلسازی کا پردہ فاش کیا ہے ، جس کی وجہ سے لوگوں کو ہندوستان کا جعلی پاسپورٹ دیا گیا ہے۔

اس دھاندلی کی جڑ ملک کے دارالحکومت دہلی سے جڑی ہے ۔ نیوز 18 انڈیا کو پانچ ایسے پاسپورٹ ہاتھ لگے ، جن میں ایک ہی ایڈریس درج تھا۔ پاسپورٹ کے حساب سے یہ تمام لوگ دہلی کے تلک نگر علاقہ کے رہنے والے تھے، لیکن تلک نگر کے اس مکان کی جانچ کرنے کے بعد پتہ چلا کہ وہاں ان ناموں میں سے ایک بھی شخص رہتا نہیں ہے۔

ایکسکلوزیو : ملک میں دھڑلے سے چل رہا ہے فرضی پاسپورٹ کا کاروبار

اسی طرح دہلی کے پاش علاقہ نیو فرینڈس کالونی میں بھی یہی دھاندلی سامنے آئی ، جس نام اور پتہ پر اس علاقہ کے پانچ لوگوں کا پاسپورٹ بنا تھا ان کا کوئی وجود ہی نہیں تھا۔ کچھ ایسی ہی حقیقت دہلی کے لکشمی نگر، نیتا جی نگر، مہرولی اور ساکیت جیسے علاقوں سے بھی سامنے آئی۔ کچھ ایڈریس مکمل طور پر فرضی نکلے، تو کچھ جگہ اس مکان کا کوئی وجود ہی نہیں تھا ، جس کا ذکر پاسپورٹ میں کیا گیا۔ کچھ ایسے بھی ایڈریس ملے ، جہاں صرف کرایہ دار رہتے ہیں، لیکن تفتیش میں پتہ چلا کہ پاسپورٹ والے نام کا کوئی شخص وہاں کبھی رہا ہی نہیں۔

نیوز 18 انڈیا کی اسپیشل انویسٹی گیشن ٹیم کو خبر ملی کہ رائے پور سے تقریبا 120 کلومیٹر دور چھتیس گڑھ کے بالود ضلع میں بھی پاسپورٹ کے فریبیوں کا بڑا جال پھیلا ہوا ہے۔ دسیتاب دستاویزات کے مطابق ایک مکان کے ایڈریس پر چار پاسپورٹ جاری ہوئے، لیکن پوچھ گچھ کے بعد سامنے آیا کہ ان ناموں میں سے کوئی وہاں نہیں رہا۔ اس مکان میں ایک سکھ خاندان رہتا ہے، جو گزشتہ کئی دنوں سے پریشان ہے ، کیونکہ اس ایڈریس پر جن چار لوگوں نے اپنے پاسپورٹ بنوائے ہیں، ان کے بارے میں انہیں کوئی خبر نہیں۔ لیکن گزشتہ کچھ دنوں سے پولیس اہلکار مسلسل ان سے پوچھ گچھ کر رہے ہیں۔

ایک نزدیکی تھانے میں اس کیس کے پہنچنے کے بعد پولیس کا کہنا ہے کہ جن چار افراد کے پاسپورٹ بنے ہیں، ان کے بارے میں پاسپورٹ آفس کو یہی رپورٹ بھیجی گئی تھی کہ یہ لوگ وہاں نہیں رہتے۔ اس کے باوجود ان کا پاسپورٹ بن گیا۔ نہ صرف ایک شخص کا پاسپورٹ تو ویریفکیشن رپورٹ دینے سے پہلے ہی تیار ہو چکا تھا۔

اس سے یہ بات تو بالکل صاف ہے کہ پاسپورٹ کے دلالوں کی پہنچ کتنی اوپر تک ہے۔ اتنا ہی نہیں کچھ معاملات تو ایسے ہیں کہ پاسپورٹ پر درج پتہ تک اصلی نہیں ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز