Live Results Assembly Elections 2018

کیا آپ خود کو انڈین مانتے ہیں جیسے سوال پر فاروق عبداللہ صحافی پر برس پڑے

نئی دہلی۔ نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ گذشتہ شام یہاں انڈیا ٹوڈے گروپ کی جانب سے منعقدہ ’ایجنڈا آج تک‘ تقریب کے دوران اس وقت شدید غصے میں آ گئے جب صحافی پونیہ پرسون باجپائی نے مسٹر عبداللہ سے پوچھا کہ کیا وہ خود کو بھارتی شہری مانتے ہیں۔

Dec 02, 2017 04:47 PM IST | Updated on: Dec 02, 2017 04:47 PM IST

نئی دہلی۔  نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ گذشتہ شام یہاں انڈیا ٹوڈے گروپ کی جانب سے منعقدہ ’ایجنڈا آج تک‘ تقریب کے دوران اس وقت شدید غصے میں آ گئے جب صحافی پونیہ پرسون باجپائی نے مسٹر عبداللہ سے پوچھا کہ کیا وہ خود کو بھارتی شہری مانتے ہیں۔ یہ سوال سنتے ہی فاروق عبداللہ پونیہ پرسون باجپائی پر برس پڑے اور انہیں ذہنی مریض قرار دیتے ہوئے ماہر نفسیات کے پاس جانے کا مشورہ دیا۔ تاہم انٹرویو کے دوران نیشنل کانفرنس صدر اپنے ایک حالیہ ویڈیو کلپ پر زبردست ہنس پڑے جس میں انہیں مرکزی حکومت سے مخاطب ہوکر یہ کہتے ہوئے سنا جا سکتا ہے کہ ’ارے یہ (پاکستان زیر قبضہ کشمیر) تمہارے باپ کا ہے کیا؟ ‘۔ جب ’آج تک‘ کے صحافی پرسون باجپائی نے مسٹر عبداللہ سے پوچھا کہ ’کیا وہ خود کو بھارتی شہری مانتے ہیں‘ تو وہ شدید غصے میں آگئے اور کہنے لگے ’کیا آپ کو اس پر کوئی شک ہے۔ مجھے اپنے ہندوستانی ہونے پر شک نہیں ہے۔ کیا آپ سامعین میں کسی سے پوچھیں گے کہ آپ ہندوستانی ہیں یا نہیں۔ آپ کو یہ پوچھنے کا کس نے حق دیا ہے ۔ آپ کی یہ پوچھنے کی ہمت کیسے ہوئی؟ آپ کو یہ بیماری لگ گئی ہے۔ آپ کو ماہر نفسیات کے پاس جانا چاہیے۔ مجھے چیلنج کرنے کی ہمت مت کرو‘۔

یہ پوچھے جانے پر کہ ’کشمیریوں کو ملک کے دوسرے حصوں میں شک کی نظر سے دیکھنے کے سلسلے پر بریک لگانے کی سمت میں کیا کرنا ہوگا تو فاروق عبداللہ کا جواب تھا ’راستہ ایک ہی ہے کہ آپ اپنے دل سے یہ بات نکال لیجئے کہ ہم ہندوستانی نہیں ہیں۔ جس دن آپ یہ اپنے دل سے نکال لیں گے، اس دن کسی کشمیری کو شک کی نظر سے دیکھنا بند ہوگا۔ اس شک نے آپ لوگوں کو مار ڈالا ہے۔ یہ شک ہے یا سیاست، یہ تو آپ لوگ ہی جانتے ہو۔ تم لوگوں نے تو بہت سیاست کھیل لی ہے‘۔

کیا آپ خود کو انڈین مانتے ہیں جیسے سوال پر فاروق عبداللہ صحافی پر برس پڑے

نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ: پی ٹی آئی، فائل فوٹو۔

انٹرویو کے دوران نیشنل کانفرنس صدر اپنے ایک حالیہ ویڈیو کلپ پر زبردست ہنس پڑے جس میں انہیں مرکزی حکومت سے مخاطب ہوکر یہ کہتے ہوئے سنا جاسکتا ہے کہ ’پاکستان ایک حصہ دار ہے۔ پارلیمنٹ میں ان کی قرارداد ہے کہ جو حصہ پاکستان کے پاس ہے، وہ ہمارا ہے۔ ارے تمہارے باپ کا ہے کیا؟تمہارے پاس وہ طاقت نہیں ہے کہ تم وہ حصہ لے سکو۔ نہ ان کے پاس یہ طاقت ہے کہ وہ یہ حصہ لے سکے‘۔ تاہم انہوں نے اپنے موقف کے دفاع میں کہا ’ہم نے چار جنگیں کی ہیں، کیا ہم وہ حصہ حاصل کرپائے ہیں۔ لائن آف کنٹرول تو وہیں پر ہے۔ سرحدوں پر رہنے والے مر رہے ہیں۔ وہاں سے گولہ باری ہوتی ہے تو ہمارے لوگ مرتے ہیں اور ہم یہاں سے گولہ باری کرتے ہیں تو وہاں بھی ہمارے لوگ مرتے ہیں۔ بربادی کے سوا کچھ حاصل ہوتا ہے؟ یہ لوگ کشمیر آنے سے ڈرتے ہیں۔ پہلے ہزار دفعہ پوچھتے ہیں کہ ہم آئیں یا نہ آئیں۔ لندن جائیں گے۔ مگر ہمارے یہاں نہیں آئیں گے‘۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز