ہندوستا ن اور چین کے فوجی حکام کی فلیگ میٹنگ ، سرحد پر امن و سکون برقرار رکھنے کی تدابیر پر گفتگو

جموں و کشمیر کے لداخ سیکٹر میں سرحدی پانگونگ جھیل کے پاس چینی فوجیوں کے مبینہ طورپر ہندوستانی خطے میں داخل ہونے کے ایک روز بعد آج لیہہ کے چوسول علاقہ میں ہندوستان اور چین کے فوجی حکام نے فلیگ میٹنگ کی۔

Aug 16, 2017 08:46 PM IST | Updated on: Aug 16, 2017 08:46 PM IST

نئی دہلی: جموں و کشمیر کے لداخ سیکٹر میں سرحدی پانگونگ جھیل کے پاس چینی فوجیوں کے مبینہ طورپر ہندوستانی خطے میں داخل ہونے کے ایک روز بعد آج لیہہ کے چوسول علاقہ میں ہندوستان اور چین کے فوجی حکام نے فلیگ میٹنگ کی۔ ذرائع کے مطابق میٹنگ میں سرحد پر حالیہ واقعات کے ساتھ ہی سرحد پر امن و سکون کا ماحول برقرار رکھنے کی موجودہ میکانیزم کو مستحکم کرنے کی تدابیر پر بات چیت کی گئي ۔

واضح رہے کہ کل شائع ہونے والی خبروں میں کہا گيا تھا کہ ہندوستانی فوجیوں نے لداخ کے سرحدی علاقے میں چینی فوجیوں کے داخل ہونے کی کوشش کو ناکام بنادیا ، جس کے بعد دونوں طرف سے سنگباری ہوئي تھی ، جس میں دونوں طرف کے سپاہیوں کو معمولی چوٹیں آئی تھیں۔ اس سے پہلے فوج کے ایک ترجمان سے جب اس سلسلے میں پوچھا گیا، تو انہوں نے تبصرہ کرنے سے انکار کردیا، جبکہ ایک اہلکار نے صرف اس طرح کے واقعات پر وزارت خارجہ کے اس موقف کا اعادہ کیا کہ حقیقی کنٹرول لائن کے خاکہ میں اختلاف کی وجہ سے اس طرح کے واقعات پیش آتے ہیں۔

ہندوستا ن اور چین کے فوجی حکام کی فلیگ میٹنگ ، سرحد پر امن و سکون برقرار رکھنے کی تدابیر پر گفتگو

دریں اثناء، بیجنگ میں جب چین کی وزارت خارجہ کی ترجمان ہیو چنیانگ سے اس بارے میں دریافت کیا گيا تو انہوں نے کہا کہ "ہم کو اس کی کوئي اطلاع نہیں ہے"۔ انہوں نے کہا کہ چین کی فوج ہند-چین سرحد پر امن و دوستانہ ماحول کی حفاظت کے لئے ہمیشہ پابند عہدہے۔ ہماری فوج ہمیشہ حقیقی کنٹرول لائن کے اندر ہی گشت کرتی ہے۔ہم ہندوستان سے ایل اے سی کے دائر میں رہنے اور دونوں ملکوں کے درمیان طے پانے والے معاہدوں کا پاس رکھنے کی اپیل کرتے ہیں۔ تاہم، ڈوکلام کے سلسلے میں انہوں نے کہا کہ یہ خطہ چین کا ہے اور ہندوستانی فوج کو غیر مشروط طورپر پیچھے ہٹ جانا چاہئے۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز