اقتصادی ترقی کی رفتار پڑی سست ، گھریلو پیداوار کی شرح میں زبردست گراوٹ ، چین سے پچھڑا ہندستان

نوٹوں کی منسوخی کے بعد پہلی بار اقتصادی ترقی کی شرح میں زبردست گراوٹ درج کی گئی ہے۔

Aug 31, 2017 08:09 PM IST | Updated on: Aug 31, 2017 08:09 PM IST

نئی دہلی : نوٹوں کی منسوخی کے بعد پہلی بار اقتصادی ترقی کی شرح میں زبردست گراوٹ درج کی گئی ہے۔ اشیا اور خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی )کے نفاذ کے بعدکمپنیوں کے ذریعہ پیداوار میں کمی سے مصنوعات سازی کی سرگرمیوں میں آئی سستی کی وجہ سے موجودہ مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں مجموعی گھریلو پیداوارکی شرح 5.7 فیصد رہی جبکہ پچھلے مالی سال کی اسی مدت میں اس کی شرح 7.9 فیصد تھی۔

مرکزی شماریاتی دفتر کے ذریعہ جی ڈی پی کے اعداد و شمار جاری کرنے کے بعد یہاں چیف شماریاتی افسر ٹی سی اے اننت نے صحافیوں کو بتایا کہ مصنوعات سازی کی سرگرمیوں میں سستی آنے کی وجہ سے اقتصادی ترقی پر اثر پڑا ہے ۔ 2016- 17 کی آخری سہ ماہی جنوری ۔مارچ کے دوران مجموعی گھریلو پیداور (جی ڈی پی) کی شرح نمو 6.1 فیصد رہی تھی۔

اقتصادی ترقی کی رفتار پڑی سست ، گھریلو پیداوار کی شرح میں زبردست گراوٹ ، چین سے پچھڑا ہندستان

2016-17 میں پورے سال کے دوران شرح ترقی 7.1 فیصد تھی۔ موجودہ مالی سال کی پہلی سہ ماہی اپریل اور جون کے دوران شرح ترقی کم ہوکر 5.7 فیصد پر آگئی جو اسی مدت میں چین کی 6.9 فیصد کی شرح سے بہت کم ہے۔ گزشتہ کچھ برسوں کے دوران ہندستان کی معیشت دنیا میں سب سے تیزی سے ترقی پانے والی معیشت تھی، لیکن یہ چین سے کے پیچھے ہوگئ ہے ۔ آئندہ کچھ سہہ ماہیوں میں بہتر کارکردگی کے بعد ہی ہندستان دوبارہ چین سے آگے نکل سکے گا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز