جلیان والا باغ: اس دن گولیاں کم پڑ گئی تھیں ورنہ

Apr 13, 2017 11:40 AM IST | Updated on: Apr 13, 2017 11:40 AM IST

نئی دہلی۔ ہندوستان کی تاریخ کے سب سے سیاہ دنوں میں سے ایک، جلیان والا باغ قتل عام کی آج برسی ہے۔ آج ہی کے دن 13 اپریل 1919 کو بریگیڈیر جنرل ریجینالڈ ڈائر نے امرتسر کے جلیان والا باغ میں بیساکھی کے موقع پر جمع ہزاروں نہتے معصوم ہندوستانیوں پر اندھا دھند گولیاں چلوا دی تھیں۔ اس بھیڑ میں خواتین اور بچے بھی تھے۔ جلیان والا باغ کے چاروں طرف بڑی بڑی دیواریں بنی ہوئی تھیں اور پھر وہاں باہر جانے کے لئے صرف ایک ہی مرکزی دروازہ تھا اور دو تین چھوٹی گلیاں ہی تھیں۔

جنرل ڈائر یہاں 50 مسلح سپاہیوں کے ساتھ پہنچا اور بغیر کسی پیشگی اطلاع کے ہندوستانیوں پر گولی چلانے کا حکم دے دیا۔ ایک اندازے کے مطابق یہ فائرنگ 10 منٹ تک چلتی رہی اور ان معصوم ہندوستانیوں پر تقریبا 1650 راؤنڈ کی فائرنگ کی گئی۔ اس فائرنگ میں تقریبا 1000-2000 ہندوستانی ہلاک اور متعدد شدید زخمی ہوگئے۔

جلیان والا باغ: اس دن گولیاں کم پڑ گئی تھیں ورنہ

اور گولیاں رہتیں تو اور ہندوستانیوں کو مارا جاتا

معصوم اور نہتے ہندوستانیوں کا خون بہانے والے جنرل ڈائر پر اس واقعہ کا کوئی اثر نہیں ہوا، الٹا اس نے اس قتل عام کو درست ٹھہرایا تھا۔ واقعہ کے بعد ڈائر نے کہا کہ یہ قتل عام دور رس اثرات کے لئے ضروری تھا۔ یہی نہیں، اس نے تسلیم کیا کہ اگر اور گولیاں ہوتیں تو فائرنگ اور دیر تک جاری رہتی۔ اس کا سیدھا مطلب یہ تھا کہ اگر ڈائر کے سپاہیوں کی گولیاں ختم نہیں ہوتیں تو جلیان والا میں اور لاشیں گرتیں۔

اکتوبر 1919 میں برطانوی حکومت نے اس واقعہ کی تحقیقات کے لئے ہنٹر کمیٹی تشکیل دی۔ ہنٹر کمیٹی کی سماعت کے دوران 19 نومبر 1919 کو لاہور میں ڈائر نے سر چمنلال سیتلواڑ کے سوالات کا جواب دیا جو چونکانے والے تھے۔ سر چمنلال سیتلواڑ نے اپنی سوانح عمری 'ریكلیكشنس اینڈ رپفلیكشنس' میں ڈائر نے ان سوالات کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ جلیانوالا باغ میں مسلح گاڑیاں نہ پہنچ پانے سے وہ معصوموں پر مشین گنوں سے فائرنگ نہیں کروا پایا۔

اگر گاڑیاں پہنچ جاتیں تو وہ ان سے بھی ہندوستانیوں پر گولیاں چلواتا۔ ڈائر نے کورٹ میں سیتلواڑ کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ وہ وہاں سزا دینے گیا تھا اور اگر اسے موقع ملتا تو وہ صرف امرتسر ہی نہیں پورے پنجاب میں ایسا کچھ کرتا کیوںکہ وہ ہندوستانیوں کا حوصلہ توڑ دینا چاہتا تھا، ہندوستانی باغیوں کا حوصلہ۔

ڈائر نے ہندوستانیوں کو مارا لیکن ان کے آزاد ہندوستان کے خواب کو نہیں

اس قتل کے بعد رابندر ناتھ ٹیگور جی نے مخالفت کے طور پر اپنے 'نائٹ ہڈ' کے خطاب کو واپس لوٹا دیا تھا۔ ڈائر نے بھلے ہی معصوموں کا قتل کروایا لیکن وہ آزادی کے خواب کا قتل نہیں کر سکا۔ واقعہ کے بعد آزادی کا شعلہ اور زوروں سے بھڑکنے لگا، ان دنوں مواصلات کم ہونے کے باوجود بھی اس قتل عام کی خبر پورے ملک میں آگ کی طرح پھیل گئی۔ آزادی کے خواب کو کچلنے کے لئے کرائے گئے اس قتل عام نے الٹا آزادی کی آگ کو بچے-بچے کے سینے میں بھڑکا دیا۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز