Live Results Assembly Elections 2018

منی شنکر ایئرکے گھر پاکستانی ہائی کمشنر کے ساتھ میٹنگ ہوئی تھی: جنرل کپور

نئی دہلی۔ سابق آرمی چیف جنرل دیپک کپور نے دعوی کیا ہے کہ کانگریس سے معطل سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر منی شنکر ائیر کے گھر پاکستان کے سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری اور ہائی کمشنر عبدالباسط کی موجودگی میں ایک میٹنگ ہوئی تھی اور وہاں میں خود بھی موجود تھا۔

Dec 11, 2017 12:57 PM IST | Updated on: Dec 11, 2017 12:57 PM IST

نئی دہلی۔ سابق آرمی چیف جنرل دیپک کپور نے دعوی کیا ہے کہ کانگریس سے معطل سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر منی شنکر ائیر کے گھر پاکستان کے سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری اور ہائی کمشنر عبدالباسط کی موجودگی میں ایک میٹنگ ہوئی تھی اور وہاں میں خود بھی موجود تھا۔ ایک انگریزی روزنامہ اخبار کے مطابق جنرل کپور نے اس بات چیت میں دعوی کیا -’’ جی ہاں، میں اس میٹنگ کا حصہ تھا۔ اس میٹنگ میں ہندوستان-پاکستان تعلقات کے علاوہ کسی معاملے پر بات چیت نہیں ہوئی‘‘۔

بی بی سی کے مطابق سینئر صحافی پریم شنکر جھا نے ان سے کہا کہ وہ بھی مسٹر ایئر کے گھر پر ہونے والی اس میٹنگ میں شامل تھے۔ مسٹر جھا نے بھی دعوی کیا ہے کہ اس بات چیت میں گجرات یا احمد پٹیل کا ذکر نہیں ہوا ہے۔ مسٹر جھا کے مطابق-’’ یہ ایک ذاتی ملاقات تھی۔ قصوری صاحب اور منی شنکر ائیر پرانے دوست ہیں۔ اس میٹنگ میں ہند-پاک تعلقات کو کس طرح بہتر کیا جائے، اس پر بات ہوئی تھی‘‘۔

منی شنکر ایئرکے گھر پاکستانی ہائی کمشنر کے ساتھ میٹنگ ہوئی تھی: جنرل کپور

کانگریس سے معطل سینئر لیڈر اور سابق مرکزی وزیر منی شنکر ائیر: فائل فوٹو۔

وزیر اعظم نریندر مودی اور بی جے پی صدر امت شاہ نے مسٹر ائیر کے گھر پر سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ اور سابق نائب صدر حامد انصاری کی موجودگی میں گجرات انتخابات کے دوران پاکستانی ہائی کمشنر، وہاں کے سابق وزیر خارجہ کے ساتھ ہونے والی مبینہ خفیہ ملاقات پر سوال اٹھاتے ہوئے کل کہا تھا کہ کانگریس کو بتانا چاہئے کہ اس کا مقصد کیا تھا۔مسٹر مودی نے کہا تھا کہ پاکستانی فوج کے سابق ڈائرکٹر جنرل ارشد رفیق نے یہ بھی کہا تھا کہ گجرات میں کانگریس صدر سونیا گاندھی کے سیاسی مشیر احمد پٹیل کو وزیر اعلی بنانے کے لئے لوگوں کو حمایت کرنی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی فوج کا اتنا بڑا ریٹائرڈ افسر گجرات انتخابات میں کیوں سر گھسا رہا ہے۔

کانگریس کے ترجمان رنديپ سرجےوالا نے اس پر کہا تھا-’’ ملک کے اعلی ترین عہدہ پر بیٹھ کر وزیر اعظم بے بنیاد الزام لگا رہے ہیں‘۔ انہوں نے کہا تھا کہ ’’مودی جی فکر مند، مایوس اور ناراض ہیں۔ ایسے بیان میں کوئی سچائی یا حقیقت نہیں ہے اور یہ جھوٹ پر مبنی ہے۔ ایسا رویہ وزیر اعظم کو زیب نہیں دیتا‘‘۔

Loading...

Loading...

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز