گورکھپور معاملہ: تحقیقاتی کمیٹی نے مانا، آکسیجن کی کمی سے ہوئی بچوں کی موت

انکوائری کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں مانا کہ ان بچوں کی موت ان کے وارڈ میں آکسیجن کی فراہمی نہ ہونے کی وجہ سے ہوئی تھی۔

Aug 17, 2017 10:58 AM IST | Updated on: Aug 17, 2017 10:58 AM IST

گورکھپور۔ یوپی میں گورکھپور کے بابا راگھو داس میڈیکل کالج اور اسپتال (بی آر ڈی) میں 60 سے زائد بچوں کی موت کے معاملے میں جانچ کمیٹی نے اپنی رپورٹ سونپ دی ہے۔ انکوائری کمیٹی نے اپنی رپورٹ میں مانا کہ ان بچوں کی موت ان کے وارڈ میں آکسیجن کی فراہمی نہ ہونے کی وجہ سے ہوئی تھی۔ آکسیجن سپلائی کرنے والی کمپنی اور آکسیجن یونٹ کے انچارج ڈاکٹر ستیش کو اس غفلت کے لئے ذمہ دار ٹھہرایا گیا ہے۔ ساتھ ہی اس میں آکسیجن سپلائر کمپنی کو ادائیگی نہ ہونے کے پیچھے مالی بے ضابطگیوں کی منشا کا بھی ذکر ہے۔

دو صفحات کی اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ آکسیجن سپلائی کرنے والی کمپنی کو پیسے دینے کے لئے اسپتال کے اکاؤنٹ میں پانچ اگست کو رقم جمع کرا دی گئی۔ اس کے باوجود اسپتال کے چھ ملازمین کی لاپرواہی کے چلتے اس رقم کو بھیجنے میں تاخیر ہوئی۔ جبکہ ان افسران کو پہلے سے پتہ تھا کہ ادائیگی میں غفلت برتنے پر سنگین نتائج ہو سکتے ہیں۔

گورکھپور معاملہ: تحقیقاتی کمیٹی نے مانا، آکسیجن کی کمی سے ہوئی بچوں کی موت

تصویر: بی آر ڈی میڈیکل کالج اسپتال (پی ٹی آئی)۔

رپورٹ کے مطابق، تحقیقات میں بی آر ڈی میڈیکل کالج کے پرنسپل ڈاکٹر راجیو مشرا، ایچ او ڈی اینستھیسیا ڈاکٹر ستیش، چیف فارماشسٹ گجانن اگروال کے کام کاج کو غیر تسلی بخش پایا گیا۔

یوگی حکومت کے سخت تیور

اس سے پہلے یوپی حکومت نے اس معاملے میں گورکھپور کے بی آر ڈی میڈیکل کالج کے پرنسپل کو معطل کر دیا تھا۔ ساتھ ہی انسیفلائٹس وارڈ انچارج ڈاکٹر کفیل کو ہٹا دیا گیا تھا۔ وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے وزیر صحت سدھارتھ ناتھ سنگھ اور طبی تعلیم کے وزیر آشوتوش ٹنڈن کو سانحہ کے ذمہ دار کسی کو بھی نہ بخشنے کی ہدایت دی تھی۔

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز