اقلیتوں کیلئے حکومت کی نئی اسکیم ، بیٹی کی شادی کیلئے ملیں گے 51000 روپے ، 25 کالج کھولنے کا بھی فیصلہ

Jul 06, 2017 10:25 PM IST | Updated on: Jul 06, 2017 10:25 PM IST

نئی دہلی : مرکزی اقلیتی وزارت نے اعلان کیا ہے کہ اس سال سے اقلیتی غریب خواتین کے لئے ایک نئی اسکیم شروع کی جا رہی ہے۔ اسکیم کے تحت انہیں شادی کے لئے 51000 روپے دیے جائیں گے۔ ساتھ ہی ساتھ اقلیتوں کے لئے ملک بھر میں 200 اسکول، 25 کالج اور پانچ بین الاقوامی سطح کے انسٹی ٹیوٹ بنانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ہے۔

جمعرات کو دہلی میں وزارت کے تحت کام کرنے والے مولانا آزاد ایجوکیشن فاؤنڈیشن کی گورننگ باڈی کی میٹنگ ہوئی۔ میٹنگ میں ان منصوبوں کو منظوری دی گئی۔ اقلیتی بہبود کے وزیر مختار عباس نقوی نے بتایا کہ فی الحال اقلیتی برادری کی لڑکیوں کے لئے بیگم حضرت محل اسکالر شپ دی جاتی ہے۔ یہ اسکالر شپ نویں کلاس میں دی جاتی ہے ، جس سے وہ اپنی تعلیم مکمل کر سکیں۔

اقلیتوں کیلئے حکومت کی نئی اسکیم ، بیٹی کی شادی کیلئے ملیں گے 51000 روپے ، 25 کالج کھولنے کا بھی فیصلہ

وزارت نے فیصلہ کیا ہے کہ اس اسکالرشپ کا دائرہ بڑھا دیا جائے گا۔ اس اسکالر شپ کے تحت اب طالبات کو 51 ہزار روپے الگ سے دیے جائیں گے۔ طالبات کو یہ پیسہ بینک میں فکسڈ ڈیپازٹ کرنا ہوگا۔ اس پیسے کا استعمال وہ گریجویشن پاس کرنے کے بعد شادی کے وقت کر پائیں گی۔ اسے شادی کا تحفہ بھی سمجھا جا سکتا ہے۔

نقوی کا کہنا ہے کہ یہ اسکالر شپ صرف غریب طالبات کے لئے ہے۔ کچھ غریب والدین اپنی بیٹی کی شادی کے لئے پیسہ نہیں اکٹھا کر پاتے ہیں ۔ یہ اسکیم اس لیے بتائی گئی ہے کہ شادی کے لئے پیسے اکٹھا کرنے کی کوشش میں وہ اپنی بیٹیوں کی تعلیم درمیان میں نہ ختم کروادیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز