راہل کو بار بار مندر جا کر بھی گجرات میں نہیں ملی کامیابی: گری راج سنگھ

نئی دہلی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر اور مرکزی وزیر گری راج سنگھ نے کانگریس صدر راہل گاندھی کے گجرات میں مندروں میں جانے کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا ہے کہ ایک بھگوان سے دوسرے بھگوان کے درشن کرنے کے باوجود ان کی پارٹی نے ایک بار پھر شکست کا سامنا کیا ہے۔

Dec 20, 2017 11:51 AM IST | Updated on: Dec 20, 2017 11:51 AM IST

نئی دہلی۔ بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر اور مرکزی وزیر گری راج سنگھ نے کانگریس صدر راہل گاندھی کے گجرات میں مندروں میں جانے کا مذاق اڑاتے ہوئے کہا ہے کہ ایک بھگوان سے دوسرے بھگوان کے درشن کرنے کے باوجود ان کی پارٹی نے ایک بار پھر شکست کا سامنا کیا ہے۔ مسٹر سنگھ نے کہا "وہ (راہل گاندھی ) ایسے آدمی ہیں جو ایک بھگوان سے دوسرے بھگوان کے پاس اچھلتے رہے لیکن ان کی مدد کے لیے کوئی نہیں آیا‘‘۔ انہوں نے کل پارلیمنٹ کے باہر صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ حال ہی میں اختتام پذیر گجرات اسمبلی انتخابات میں لفظ سیکولرازم کو سیاسی طور پر نئے معنی دینے کی کوشش کی گئی۔

انہوں نے کہا کہ پہلے سیکولرازم کی آڑ میں اقلیتوں کی تشٹی کرن(منہ بھرائی) کی سیاست ہوتی تھی لیکن پہلی بار اس کا مطلب یہ بھی سامنے آیا ہے کہ اکثریتی فرقہ کو طویل عرصہ تک نظر انداز نہیں کیا جا سکتا ہے۔ قابل غور ہے کہ گجرات اسمبلی انتخابات کے دوران مسٹر گاندھی دواركادھيش، چوٹيلا، كاگواڈ میں كھودلدھام، سومناتھ اور جالارام باپا مندروں میں گئے تھے۔ مندروں کے لیے مسٹر گاندھی کی اس نئی محبت پر بی جے پی سوال اٹھا چکی ہے اور ایودھیا معاملہ پر کئی بار ان سے اور کانگریس کا رخ واضح کرنے کے لیے بھی کہا ہے۔

راہل کو بار بار مندر جا کر بھی گجرات میں نہیں ملی کامیابی: گری راج سنگھ

بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے سینئر لیڈر اور مرکزی وزیر گری راج سنگھ: فائل فوٹو۔

ایک اور موقع پر بی جے پی صدر امت شاہ نے کہا کہ ان کی خواہش ہے کہ گجرات کے ان انتخابات کے بعد بھی مسٹر گاندھی مندروں کے درشن کے لئے جاتے رہیں۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز