دہلی سے 24جولائی کو ہوگی عازمین حج کی پہلی فلائٹ ، 67520 سعودی ایئر لائن اور 57505 ایئر انڈیاسے کریں گے سفر

Apr 19, 2017 10:35 PM IST | Updated on: Apr 19, 2017 10:35 PM IST

نئی دہلی: حج 2017کی تیاریاں اپنے آخری مراحل میں ہیں اور اب ایئر لائن کمپنیوں سے معاہدہ طے ہوجانے کے بعد24جولائی 2017کو دہلی سے عازمین حج کی پہلی فلائٹ ہوگی جبکہ واپسی 7ستمبر کی تاریخ سے جدہ سے شروع ہوجائے گی۔ ذرائع کے مطابق عازمین حج کی پہلی فلائٹ دہلی سے سعودی ایئر لائن کی فلائٹ ایس وی 5227صبح 8:30بجے روانہ ہوگی جو سیدھے مدینہ منورہ جائے گی۔

ذرائع کے مطابق دہلی امبارکیشن پوائنٹ سے سب سے زیادہ کل 16400 عازمین حج سفر کریں گے جبکہ لکھنؤسے 12960،کوچین سے 11580اور احمد آباد سے 11380 عازمین حج روانہ ہوں گے۔دراصل حج ایئر لائنوں سے ضروری تیاریوں کو آخری شکل دینے اور معاہدہ کو حتمی منظوری دینے کے لئے مرکزی حج کمیٹی کی ذیلی ایئر چارٹرکمیٹی کی میٹنگ چارٹر کمیٹی کے چیرمین اور ممبر آف پارلیمینٹ حسین دلوائی کی صدارت میں ممبئی پلٹن روڈ پر واقع حج کمیٹی کے مرکزی دفتر پر ایک میٹنگ منعقد کی گئی جس میں مرکزی حج کمیٹی کے ذریعہ جانے والے ہندوستانی حجاج کرام کو سعودی لانے اور لیجانے کیلئے معاہدہ طے پایاجس کے تحت سعودی ایئر لائنس ہندوستان کے کل 21امبارکیشن پوائنٹس میں سے 7مقامات سے حجاج کرام کو مدینہ اور جدہ لے جائے گی جبکہ باقی کے 14امبارکیشن پوائنٹ سے حاجیوں کو لے جانے کی ذمہ داری ایئر انڈیا کے حوالے کی گئی ہے، ہر فلائٹ میں تقریبا 300حجاج کرام سفر کرسکیں گے جس میں حج کمیٹی نے ہوائی کمپنیوں کو حاجیوں کی سہولت کا ہرطرح سے خیال رکھنے کی ہدایت دی ہے۔

دہلی سے 24جولائی کو ہوگی عازمین حج کی پہلی فلائٹ ، 67520 سعودی ایئر لائن اور 57505 ایئر انڈیاسے کریں گے سفر

file photo

حج کمیٹی کے ممبر عرفان احمد نے نمائندہ کو بتایا کہ حاجیوں کے سامان گم ہونے کی شکایت کا ازالہ کرتے ہوئے اس مرتبہ حجاج کے لگیج میں ایک ٹیگ لگایا جائے گا۔عرفان احمدکے مطابق گرین زمرہ کے حجاج کرام کے لگیج میں گرین ٹیگ جبکہ عزیزیہ زمرہ کے حجاج کرام کے سامان میں سفید ٹیگ لگایا جائے گا جس میں حاجی سے متعلق تمام ضروری معلومات ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ ہوائی کمپنیوں کو فلائٹ میں تاخیر نہ ہونے اور حاجیوں کی ہر طرح سے سہولت کا خیال رکھنے کی ہدایات جاری کی گئیں ہیں۔ ذرائع کے مطابق ایئر انڈیااور سعودی ایئر لائنز کے علاوہ دیگر ہوائی کمپنیوں نے بھی مرکزی حج کمیٹی کے ذریعہ جانے والے عازمین حج کو لے جانے کے لئے ٹینڈر اپلائی کیا تھا جن میں گو ایئر،اسپائس جیٹ اور جیٹ ایئر ویزشامل تھیں۔

تاہم ان ایئر لائنز کا کرایہ زیادہ ہونے کی وجہ سے حج کمیٹی سے انھیں منظوری نہیں ملی۔دراصل حج کمیٹی آف انڈیا سے ایئر انڈیا اور سعودی ایئر لائنز کا حج کمیٹی کے حجاج کرام کو لیجانے کا معاہدہ ہے جس کے تحت تقریبا 50/50فیصد حجاج کرام کو لے جانے کی ذمہ داری دونوں ہوائی کمپنیوں کی ہے ۔اسی معاہدہ کے تحت 67520حجاج کرام سعودی ایئر لائن جبکہ 57505ایئر انڈیاسے سفر کریں گے۔ سعودی عربیہ ایئر لائنز جن 7امبارکیشن پوائنٹ سے حجاج کرام کو لے جائیگی ان میں دہلی ،ممبئی ،لکھنؤ،احمد آباد،چنئی ،کوچین اور حیدر آباد شامل ہیں جبکہ باقی14امبارکیشن پوائنٹ سے حاجیوں کو لے جانے کی ذمہ داری ایئر انڈیا کے سپرد ہے جس میں سے ایئر انڈیا نے دو مقام کی ذمہ داری سعودی کی ہی ایک دیگر ہوائی کمپنی فلائی ناس کو دی ہے۔

24جولائی کو سعودی ایئر لائن کی پہلی فلائٹ سے جو حجاج کرام سفر کریں گے ان کے لئے خوشی کی بات یہ ہے کہ سعودی عرب میں انھیں قیام کرنے کے لئے 45دن ملیں گے اور ان کی واپسی 7ستمبر کوجدہ سے ہوگی۔ میٹنگ کے دوران سعودی ایئر ائن کے افسران ابراہیم الکوبی،عامر الغامدی،فلائی ناس کے محمد سلیم ،انڈین ایئر لائن کے عادل ۔ایچ آر شرما،ایئر انڈیا ایڈوائزر مرلی جبکہ وزارت شہری ہوابازی کے ڈپٹی سکریٹری ای وی اننی کرشنن حج کمیٹی کے سی ای او عطاؤالرحمن کے علاوہ مرکزی حج کمیٹی کے ممبر عرفان احمد شامل رہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز