عازمین حج کے لئے ایئرلائنز کے کھلے ٹینڈر کا مرکزی حکومت سے مطالبہ

Feb 28, 2017 05:53 PM IST | Updated on: Feb 28, 2017 05:53 PM IST

میرٹھ ۔  دنیا کے دیگر ممالک کی طرح ہر سال ہندوستان سے بھی ایک لاکھ سے زیادہ عازمین سفر حج کے لئے روانہ ہوتے ہیں ، لیکن گزشتہ کچھ برسوں میں سفر حج کے کراۓ میں غیر معمولی اضافہ ہوا ہے ۔ سفر حج کے کرایہ میں جتنا اضافہ ڈالر کے مقابلے روپے کی قیمت گرنے سے نہیں ہوا اس سے زیادہ اضافہ سفر حج کے لئے ایئر لائنز کے کرایہ میں اضافہ کیے جانےسے ہوا ہے اور اسکا براہ راست اثرعازمین کی جیبوں پر پڑ رہا ہے۔ ہندوستان سے ہر سال تقریباً ڈیڑھ لاکھ عازمین سفر حج کے لئے روانہ ہوتے ہیں ۔ سفر حج کے لئے عازمین کے انتخاب کے بعد ویزا  ٹکٹ اور دیگر انتظامات کی ذمہ داری حج کمیٹی کی ہوتی ہے لیکن سعودی ایئر لائنز اور ایئر انڈیا میں ٹھیکہ سسٹم نے دوسری ایئر لائنز کے لیے راستے بند کر دیے ہیں،  جس کا سیدھا اثر سفر حج کے کرایہ پر پڑتا ہے ۔ جانکاروں کے مطابق ایک ہی وقت میں ویزٹ ویزا اور حج ویزا پر سفر کرنے والے افراد کی ٹکٹ قیمت میں پچیس سے تیس ہزار کا فرق ہوتا ہے ۔ ٹکٹوں کے لیے بازار میں کھلا ٹینڈر نہ ہونے سے سرکاری ایئر لائن اس دوران منمانہ کرایہ وصولتی ہیں ۔

مسلم سماجی اور ملی تنظیموں کے ذمہ داران مانتے ہیں کہ کسی ایک ایئر لائنز کے لئے ایک وقت میں ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ ٹکٹوں کا انتظام کرنا مشکل کام ہوتا ہے جس کی وجہ سے ٹھیکے دوسری ایئر لائنز کو منتقل کیے جاتے ہیں تاہم اس کے باوجود کرائے کم نہیں کیے جاتے ہیں ۔ جبکہ بازار میں کھلے ٹکٹ ٹینڈر دینے سے مقابلے کی صورت میں ٹکٹ کی قیمت کافی کم ہو جائیگی اور حکومت کو بھی سبسڈی دینے کا دکھاوا نہیں کرنا پڑیگا ۔ ان کا کہنا ہے کہ حج کا موقع سعودی ایئر لائنزکے لئے منافع  کا سودا ہو سکتا ہے ، لیکن اپنے ملک کے باشندوں کو سہولیات اور رعایت فراہم کرانے کے لیے حج کمیٹی اور مرکزی حکومت ایسا طریقہ کار استعمال کر سکتی ہیں جس سے منافع کے ساتھ عازمین کی سہولیات اور جیب کا بھی خیال رکھا جا سکے۔

عازمین حج کے لئے ایئرلائنز  کے کھلے ٹینڈر کا مرکزی حکومت سے مطالبہ

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز