جموں و کشمیر : سپریم کورٹ میں آرٹیکل 35 اے پر دیوالی کے بعد شروع ہوگی سماعت

Aug 25, 2017 03:04 PM IST | Updated on: Aug 25, 2017 03:04 PM IST

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے جموں و کشمیر کے باشندوں کو خصوصی حقوق دینے والے آئین کے آرٹیکل 35 اے کو چیلنج دینے والی درخواستوں پر دیوالی کے بعد سماعت کرنے کی منظوری جمعہ 25 اگست کو دے دی۔چیف جسٹس جے ایس كھیهر کی صدارت والی بنچ نے جموں و کشمیر حکومت کی درخواست کو قبول کر لیا کہ آرٹیکل 35 اے کو چیلنج دینے والی درخواستوں پر دیوالی کے بعد سماعت کی جائے۔

چیف جسٹس سمیت جسٹس دیپک مشرا اور جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ کی بینچ کے سامنے پیش ہوئے سینئر وکیل راکیش دویدی اور وکیل شعیب عالم نے کہا کہ مرکز کو دیوالی کے بعد درخواستوں پر سماعت کو لے کر کوئی اعتراض نہیں ہے۔ بنچ نے کہا کہ '' تمام درخواستوں پر دیوالی کے بعد سماعت ہوگی۔ '' اس سے پہلے عدالت نے اس معاملہ کی سماعت پانچ ججوں کی بنچ کے ذریعہ کئے جانے کی حمایت کی تھی۔

جموں و کشمیر : سپریم کورٹ میں آرٹیکل 35 اے پر دیوالی کے بعد شروع ہوگی سماعت

سپریم کورٹ آف انڈیا: فائل فوٹو، گیٹی امیجیز۔

عدالت نے کہا کہ تین ججوں کی بنچ کیس کی سماعت کرے گی اور پھر اسے پانچ ججوں کی بنچ کے پاس بھیجا جائے گا۔ عدالت چارو ولی کھنہ کی جانب سے آئین کے آرٹیکل 35 اے اور جموں و کشمیر کے آئین کی شق 6 کو چیلنج دینے والی درخواست پر سماعت کر رہی تھی۔ دونوں آرٹیکل جموں و کشمیر کے '' مستقل باشندوں '' سے وابستہ ہیں۔

عرضی میں کچھ دیگر دفعات کو بھی چیلنج کیا گیا ہے ، جیسے ... ریاست کے باہر کے کسی شخص سے شادی کرنے والی خاتون کو جائیداد کا حق نہیں ملنا، اس آرٹیکل کے تحت ریاست کے باہر کے کسی شخص سے شادی کرنے والی خاتون کا جائیداد پر حق ختم ہو جاتا ہے، اتنا ہی نہیں اس کے بیٹے کو بھی جائیداد کا حق حاصل نہیں ہوتا ہے۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز