تین طلاق معاملہ: سپریم کورٹ نے چھ دن کی سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ رکھا

May 18, 2017 02:37 PM IST | Updated on: May 18, 2017 02:44 PM IST

نئی دہلی۔ تین طلاق پر سپریم کورٹ نے سماعت مکمل کر لی ہے۔ مسلم پرسنل لاء بورڈ نے اپنا موقف رکھ دیا ہے اور کورٹ نے اب فیصلہ محفوظ کر لیا ہے۔ پرسنل لاء بورڈ نے کہا کہ ہم قاضیوں کو تین طلاق سے بچنے کا مشورہ دیتے رہیں گے۔ ساتھ ہی تین طلاق کے معاملات پر نظر رکھی جائے گی۔ غور طلب ہے کہ سپریم کورٹ میں پانچ ججوں کی بنچ نے مسلسل 6 دن تک تین طلاق معاملے پر سماعت کی۔ مرکزی حکومت نے تین طلاق کے خلاف اپنا موقف رکھا ہے۔

اس سے پہلے تین طلاق پر سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے موقف کو سنا گیا۔ کورٹ نے پوچھا تھا کہ کیا ایک عورت شادی کے معاہدے میں تین طلاق کو قبول کرنے سے انکار کر سکتی ہے۔ سی جی آئی جے ایس كھیہر نے پرسنل لا بورڈ کے وکیل کپل سبل سے پوچھا، 'کیا قاضی نكاح نامہ تیار کرتے وقت شادی کے کنٹریکٹ میں بیوی کو تین طلاق سے انکار کرنے کا اختیار دیتا ہے؟ تب سبل نے کہا کہ یہ بہت اچھا مشورہ ہے اور بورڈ اس پر ضرور توجہ دے گا۔ ساتھ ہی سبل نے کورٹ میں ایک سروے بھی دکھایا جس کے مطابق مسلمانوں میں صرف 0.37 فیصد لوگ ہی تین طلاق کو ترجیح دیتے ہیں۔

تین طلاق معاملہ: سپریم کورٹ نے چھ دن کی سماعت کے بعد فیصلہ محفوظ رکھا

علامتی تصویر: رائٹرز

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز