محبت سے شروع ہوا رشتہ شادی تک پہنچا ، مگر پھر کچھ ایسا ہوا کہ یکایک سب کچھ بدل گیا

سات ماہ پہلے سنگھ پورا کے رہنے والے نچلی ذات کے پراپرٹی ڈیلر سنیل نے اونچی ذات کی ایک نابالغ لڑکی سے محبت کی شادی کی تھی ۔

Aug 10, 2018 02:05 PM IST | Updated on: Aug 10, 2018 02:05 PM IST

آپ نے کافی سنا ہوگا کہ آنر کلنگ یا پھر ہارر کلنگ میں والد نے بیٹی کو مار ڈالا ، داد نے پوتی کی جان لے لی ، جن ہاتھوں میں پوتے کو کھلایا انہیں ہاتھوں نے پوتے کا گلا گھونٹ دیا ، کیونکہ اس نے محبت کرنے کی خطا کی تھی ۔ یہ کہانیاں اکثر ہمیں ڈراتی رہتی ہیں اور 21 ویں صدی کا راگ الاپنے والے ہمارے سماج کو آئینہ دکھاتی رہتی ہیں ۔ مگراس مرتبہ ہارر کلنگ کی ایک ایسی کہانی سامنے آئی ہے ، جس نے سب کو جھنجھور کر رکھدیا ہے ۔ معاملہ محبت سے شروع ہوا ، پھر شادی تک پہنچا ، لیکن لڑکی کے نابالغ ہونے کی وجہ سے معاملہ قانونی داو پینچ میں پھنس کر رہ گیا ۔

دراصل سات ماہ پہلے سنگھ پورا کے رہنے والے نچلی ذات کے پراپرٹی ڈیلر سنیل نے اونچی ذات کی ایک نابالغ لڑکی سے محبت کی شادی کی تھی ۔ اس وقت لڑکی کے والد نے بیٹی کو نابالغ بتاتے ہوئے سنیل اور اس کے والد پر کیس کردیا تھا ۔ باپ اور بیٹا اب دونوں سوناریا جیل میں بند ہیں ۔ لڑکی کو ناری نکیتن بھیج دیا گیا تھا ۔ اب وہ بالغ ہوگئی تھی اور گزشتہ بدھ کو روہتک میں گواہی تھی ۔

محبت سے شروع ہوا رشتہ شادی تک پہنچا ، مگر پھر کچھ ایسا ہوا کہ یکایک سب کچھ بدل گیا

علامتی فوٹو

گواہی کیلئے آئی لڑکی تو گولیوں سے بھون ڈالا

لڑکی گواہی دے کر باہر نکلی ہی تھی کہ بائیک پر سوار دو نوجوانوں نے فائرنگ شروع کردی ۔ اس کو بچانے کیلئے سامنے آئے ایس آئی نریند کو بھی حملہ آوروں نے تین گولیاں مار دیں ۔ پی جی آئی میں ایس آئی نے بھی دم توڑ دیا ۔ لڑکی کو دو گولیاں لگی تھیں ۔ واقعہ کے بعد بائیک پر آئے بدمعاش فرار ہوگئے ۔

بیان تو تب درج ہوگا جب ہم جینے دیں گے

سنیل کی ماں نے بتایا کہ بہو کا والد رمیش جیل میں بند میرے بیٹے سنیل اور شوہر کو قتل کرنے کی دھمکی دے رہا ہے ، ہمارے گھر پر صبح بھی رمیش نے دھمکی دی تھی ، اس نے کہا تھا کہ بیٹی کا بیان تو اس وقت ہی درج ہوگا جب اسے ہم زندہ رہنے دیں گے ، میں اپنے بیٹے دنیش کو لے کر کورٹ پہنچی ، کورٹ میں بہو کا باپ بھی آیا تھا ، اسی نے ریکی کرکے قتل کرنے والوں کو فون کیا ۔

کورٹ سے نکلتے ہی کردی تابڑتوڑ فائرنگ

ہم کورٹ سے نکل کر گیٹ پر پہنچے ہی تھے کہ تین بدمعاشوں نے بہو کو دو گولی ماری ۔گولی چلتے ہی افراتفری مچ گئی ۔ ایس آئی لڑکی کو بچانے کیلئے ریوالور نکالنے لگے ، تو ایک بدمعاش نے ان پر بھی گولیاں برسا دیں ۔ مجھے خاتون پولیس اہلکاروں نے بچالیا اور خود میرے آگے کھڑی ہوگئیں ۔

بیٹے دنیش پر بھی ملزموں نے گولیاں برسائیں ، لیکن پتھر اٹھانے کیلئے نیچے جھکا تو وہ بال بال بچ گیا ۔ زخمیوں کو پولیس کی وین میں ہی پی جی آئی پہنچایا گیا ۔

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز