ایس ایم ایس سے بھیجا تین طلاق، مفتی حضرات نے نہیں دی رائے، اب مہا پنچایت کرے گی فیصلہ

نئی دہلی۔ ہریانہ کے ہتھين (پلول ضلع) کے ایک گاؤں سے ایس ایم ایس بھیج کر طلاق دینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔

Feb 08, 2017 04:33 PM IST | Updated on: Feb 08, 2017 04:33 PM IST

نئی دہلی۔ ہریانہ کے ہتھين (پلول ضلع) کے ایک گاؤں سے ایس ایم ایس بھیج کر طلاق دینے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔ اس معاملے کو لے کر جلال پور گاؤں میں مہا پنچایت بلائی گئی ہے۔ یہاں کے ملائی گاؤں کے شاکر کا نکاح دو سال پہلے نوح (میوات) ضلع کے گاؤں اٹیرنا میں ہوا تھا۔ اس کی ایک بیٹی بھی ہے۔ بتایا گیا ہے کہ میاں بیوی کے درمیان ایک ماہ پہلے کسی بات کو لے کر تنازعہ ہو گیا تھا۔ اس کے بعد بیوی میکے چلی گئی۔ پھر شاکر نے اپنے سسر کے فون پر تین طلاق کا میسج بھیج دیا۔ اس کے بعد لڑکی کے گھر والے اپنے رشتہ داروں کو لے کر گاؤں ملائی پہنچے۔ منگل کو اس کے بارے میں مفتی حضرات سے مشورہ کیا گیا، لیکن انہوں نے ابھی تک اس بارے میں کوئی رائے نہیں دی ہے۔ ابھی تک یہ طے نہیں ہوا ہے کہ میسج میں تین بار لکھے لفظ سے طلاق ہوئی ہے یا نہیں۔ اس کے لئے علماء کرام سے رائے لی جا رہی ہے۔

شائستہ عنبر بولیں درج ہونا چاہئے معاملہ

ایس ایم ایس سے بھیجا تین طلاق، مفتی حضرات نے نہیں دی رائے، اب مہا پنچایت کرے گی فیصلہ

آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کی صدر شائستہ عنبر کا کہنا ہے کہ ایس ایم ایس بھیج کر طلاق کو بالکل بھی درست نہیں ٹھہرایا جا سکتا۔ لڑکی کو ایسے آدمی کے خلاف فوری طور پر تھانے میں رپورٹ درج کروانی چاہئے۔ پہلے میاں بیوی مل کر بات کرتے، بات نہیں بنتی تو بڑوں کے سامنے بات چیت کرکے الگ ہو جاتے۔ یہ تو کوئی بات نہیں ہے کہ کوئی ایس ایم ایس بھیج کر طلاق دے دے ۔ اسلام میں انسانی حقوق کو سب سے پہلے جگہ دی گئی ہے اور اس بنیاد پر ایسا طلاق غلط ہے۔

اسی گاؤں میں فون کر طلاق دینے کا ہوا تھا معاملہ

بتایا گیا ہے کہ ملائی گاؤں کے ہی نسیم نامی شخص نے جنوری میں اپنی بیوی کو موبائل سے فون کر طلاق دے دیا تھا۔ اس پر خاصا تنازعہ بھی ہوا تھا۔ موبائل پر طلاق دینے کے معاملے میں طلاق دی گئی متاثرہ خاتون کو پنچوں نے میکے کے گاؤں چیلاکی تحصیل تجارا ضلع الور کے لئے رخصت کر دیا تھا۔ خاتون کو پانچ لاکھ نقد رقم کے ساتھ تقریبا چھ لاکھ روپے کے زیورات بھی دیے گئے تھے۔

سسرال والے 12 فروری تک طلاق کے بدلے طے کئے گئے 25 لاکھ روپے دیں گے۔ بتایا گیا ہے کہ بطور ضمانت سسرال فریق نے دو ایکڑ زمین کا معاہدہ ایک پنچ کے نام کر دیا ہے۔ جیسے ہی 25 لاکھ کی رقم پوری ہو جائے گی، زمین کا معاہدہ منسوخ کر دیا جائے گا۔

 

متعلقہ اسٹوریز

ری کمنڈیڈ اسٹوریز